شارجہ میں طالب علم کو قتل کرنیوالے پاکستانی کو لواحقین نے معاف کرنے سے انکار کر دیا

شارجہ میں طالب علم کو قتل کرنیوالے پاکستانی کو لواحقین نے معاف کرنے سے انکار ...
شارجہ میں طالب علم کو قتل کرنیوالے پاکستانی کو لواحقین نے معاف کرنے سے انکار کر دیا

  

شارجہ (ڈیلی پاکستان آن لائن ) شارجہ میں طالب علم کو قتل کرنے والے پاکستانی نوجوان کو مقتول کے لواحقین نے معاف کرنے سے انکار کر دیا ۔

خلیج ٹائمز کے مطابق شارجہ میں فٹبال میچ کے دوران پاکستانی طالب علم کو جان سے مارنے والے نوجوان کو لواحقین نے معافی دینے سے انکار کر تے ہوئے عدالت سے اپیل کی ہے کہ اسے سخت سزا دی جائے ۔

طیارہ حادثہ: فرانسیسی تحقیقاتی ٹیم حویلیاں میں جائے وقوعہ پر پہنچ گئی

شارجہ شریعہ کورٹ نے پاکستانی نوجوان کے ورثاءکو طالب علم کے والدین سے مصالحت کرنے کیلئے ایک ماہ کا اضافی وقت دیا تھا تاہم ملزم نے عدالت کے سامنے کہا کہ طالب علم نے اس پر حملہ کیا اور جواباُُ اپنے دفاع میں اسے قتل کیا گیا ۔

قتل کا واقعہ گزشتہ سال اگست میں پیش آیا جب پاکستانی نوجوان نے فٹبال میچ کے دوران جھگڑا ہونے پر دوسری پاکستانی طالب علم کو چاقو کے وار کر کے موت کے گھاٹ اتار دیا تھا ۔

ینگ ڈاکٹر ز نے لاہور سمیت پنجاب بھر میں سرکاری ہسپتالوں کے او پی ڈیز میں کام بند کر دیا

واقعے کے بعد پولیس کو اطلاع ملی کہ سینے پر لگے چاقووں کے وار سے زخمی ایک پاکستانی نوجوان کوتشویشناک حالت میں کویت ہسپتال لایا گیا ہے تاہم طبی امداد کے دوران ہی وہ ہسپتال میں دم توڑ گیا جس کے بعد پولیس نے ملزم کو گرفتار کیا او راس نے دوران تفتیش جرم کا اعتراف بھی کر لیا۔

لاہور میں دھند کم ہو گئی ، موٹر وے کو ٹریفک کیلئے کھول دیا گیا

عدالت میں پیش ہونے کے بعد ملزم کے وکیل نے موقف اپنایا کہ مقتول نے گزشتہ رنجش کا بدلہ لینے کیلئے میرے کلائنٹ پر حملہ کیا جس پر اس نے اپنے دفاع میں چاقو وں سے اس پر وار کیا ۔ عدالت میں مقتول کے بھائیوں نے ملزم کو معاف کرنے سے انکار کرتے ہوئے استدعا کی کہ اسے سخت سے سخت سزا دی جائے ۔ دوسری جانب ملزم کے والد نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ واقعے کے وقت اس کا بیٹا نابالغ تھا اور اس کے۔

مزید : عرب دنیا