بوش ہوم اپلائنسز کے پاکستان میں پہلے شوروم کا لاہور میں افتتاح

بوش ہوم اپلائنسز کے پاکستان میں پہلے شوروم کا لاہور میں افتتاح

لاہور(پ ر)معروف جرمن کمپنی بوش ہوم اپلائنسز نے پاکستان میں اپنے پہلے باقاعدہ آفس اور شوروم کا افتتاح کردیاہے۔ شوروم اور آفس کا افتتاح پاکستان میں جرمنی کے سفیر مارٹن کوبلر، صوبائی وزیرِ خوراک بلال یاسین اور بوش ہوم اپلائنسز ایف زیڈ ای کے چیف ایگزیکٹو آفیسر الانسو نے ایک پروقار تقریب میں کیا۔ بوش ہوم اپلائنسز نے اپنے پاکستان آپریشنز کا آغاز مقامی کمپنی میگا ہومز کے تعاون سے کیا ہے۔ اس موقع پر صوبائی وزیرِ خوراک بلال یاسین نے جرمن کمپنی کی جانب سے پاکستان میں کاروبار کے آغاز کرنے کو خوش آئند قراردیتے ہوئے کہاکہ پاکستان دنیا بھر کے سرمایہ کاروں کو بہترین کاروباری مواقع فراہم کرتاہے اور ہم غیر ملکی سرمایہ کاروں کو ہر طرح کا تعاون فراہم کررہے ہیں۔ اس موقع پر بوش ہوم اپلائنسز ایف زیڈ ای کے چیف ایگزیکٹو آفیسر الانسونے کہاکہ جرمن کمپنیاں پاکستان میں ترجیحی بنیادوں پرتجارت اورکاروبارکرناچاہتی ہیں اور دونوں ممالک کے درمیان دوطرفہ تجارت کے وسیع مواقع موجودہیں۔ اس موقع پرمیگاہومز کے چیف ایگزیکٹو آفیسر عدنان شاہ بھی موجودتھے۔بوش ہوم اپلائنسز پاکستان میں اپنے سیلز اور ڈسٹری بیوشن نیٹ ورک کو توسیع دینے کیلئے ملک بھر میں ریٹیلرڈسٹری بیوشن نیٹ ورک کو بڑھا رہی ہے۔ بوش ہوم اپلائنسز ایف زیڈ ای کے چیف ایگزیکٹو آفیسر الانسو جو بوش ہوم اپلائنسز کے مشرقِ وسطیٰ جنوبی ایشائی خطے کے سربراہ بھی ہیں نے کہاکہ پاکستان ایشیا میں بلند ترین ترقی کی شرح میں سے ایک ہے ۔پاکستان2فیصد سالانہ آبادی میں اضافے کے ساتھ اس وقت خطے کی ابھرتی ہوئی معیشتوں میں سے ایک ہے جس کے نتیجے میں گھروں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے پیشِ نظر ہوم اپلائنسز کی بھی ضرورت ہے۔ مقامی میڈیا سے خطاب کے دوران انہوں نے کہاکہ ہم پاکستان میں نمبر1ہوم اپلائنسز برانڈ بننا چاہتے ہیں اور اپنے کاروبار کو آنے والے سالوں میں میں دگنی شرح سے ترقی کرتے دیکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ان کی کمپنی پاکستانی صارفین کو دنیا کی بہترین ہوم اپلائنسز پراڈکٹس سے متعارف کرانا چاہتی ہے ۔

مسٹر الانسو نے کہاکہ پاکستان جیسے ملک جہاں توانائی بحران کاسامناہووہاں ریفریجیریٹرز،اوون، ڈش واشرز اور واشنگ مشین جیسی لاکھوں ہوم اپلائنسز کم بجلی استعمال کرنے والی ہونی چاہئیں اور بوش کے کم انرجی خرچ والے چھوٹے اور بڑے ہوم اپلائنسز بلاشبہ پاکستانیوں کیلئے بہترین انتخاب ہیں۔

الانسونے کہاکہ پاکستان آبادی کے لحاظ سے دنیا کا چھٹا بڑا ملک ہے اس لئے بوش پاکستان کی بڑھتی ہوئی کنزیومر بیس اور نوجوان آبادی میں اضافے کی نسبت سے بہترین درمیانی اور طویل مدّتی کاروباری مواقع دیکھ رہی ہے۔

اس موقع پر میگاہومز کے چیف ایگزیکٹو آفیسر عدنان شاہ نے کہاکہ پاکستانی صارفین جرمن ٹیکنالوجی کی اہمیت کو سمجھتے ہیں اور انہیں یقین ہے کہ بوش ہوم اپلائنسز اور میگاہومز مل کر بوش کو پاکستان کی پسندیدہ ہوم اپلائنسز برانڈ بنائیں گے۔ عدنان شاہ نے میگا ہومز پر اعتماد اور پارٹنر شپ کیلئے بوش کا شکریہ اداکیا۔

بوش یورپ کی سب سے بڑی جبکہ دنیا کی دوسری بڑی ہوم اپلائنسز بنانے والی کمپنی ہے۔بوش کی مصنوعات گھر کی ضروریات پورا کرنے والی تمام مصنوعات مثلاً چولہے، اوون، ڈش واشرز، واشنگ مشین، ڈرائر، ریفریجیریٹر، فریزرز، ویکیوم کلینرز، کافی مشین، الیکٹرک کیتلی اور استری شامل ہیں۔ اسطرح بوش ہوم اپلائنسز کی مکمل رینج فراہم کرنے والی گلوبل کمپنی ہے۔

انہوں نے کہاکہ مصنوعات کی پائیداری، اچھی کارکردگی، 1886سے جرمنی کے ساتھ وابستگی اور جدّت اورریسرچ بوش کودنیا کی دوسری کمپنیوں سے ممتاز کرتی ہے۔ پاکستان میں بوش اپلائنسزمتعارف کرانا جنوبی ایشیاء میں اپنے کاروبارکو توسیع دینے کی طویل المدّتی گروتھ اسٹریٹجی کا حصہ ہے۔ پاکستان میں ہمارے صارفین کمپنی کی انوویشن سے فائدہ اٹھائیں گے۔ ہم اپنی مصنوعات اور خدمات سے مقامی لوگوں کی معیارِ زندگی بہتر بنانے میں اپنا کردار اداکریں گے۔

بی ایس ایچ کے بارے میں:

بی ایس ایچ 1967ء میں رابرٹ بو ش جی ایم بی ایچ اور سیمنز اے جی میونخ کے مشترکہ منصوبے کے تحت قائم ہوئی۔ بی ایس ایچ جنوری 2015ء سے بوش گروپ کا خصوصی حصہ ہے۔ پچاس سالہ تاریخ میں کمپنی جرمنی ایکسپورٹر سے دنیا کی دوسری بڑی ہوم اپلائنسز بنانے والی کمپنی بن گئی ہے۔ 56ہزار ملازمین کے ساتھ بی ایس ایچ نے اپنی آمدنی میں 2016ء میں 13.1بلین یوروکااضافہ کیا ہے۔ دنیا بھر میں بی ایس ایچ کی 40فیکٹریاں ہیں جن میں جدید ہوم اپلائنسز کی مکمل رینج تیار ہوتی ہے۔

مزید : کامرس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...