جعلی عامل کی خاتون سے بداخلاقی

جعلی عامل کی خاتون سے بداخلاقی

عبدالحکیم (نامہ نگار ) کبیروالا کی رہائشی 40 سالہ درشہوار نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ تقریباً کچھ عرصہ قبل اپنے شوہر سے (بقیہ نمبر29صفحہ12پر )

ناچاقی پر میں تعویز لینے کے لیے پیر علی نواز کے آستانہ پر گئی اس نے اپنا وزٹنگ کارڈ دیا اور کہا کہ اب جاؤ فون پر ٹائم لے کر آنا اس طرح میں کسی کی بات نہیں سنتا۔دوسرے دن جب میں ٹائم لے کر گئی تو پیر نے کہا کہ آپ کا کام کافی پیچیدہ ہے ابھی بیٹھ جاؤ۔بعد دوپہر میرا حساب کرنے کے بعد کہا کہ آپ پر کالا جادو ہے 50 ہزار روپے نذرانہ اور ساتھ ہی تعویز لکھنے پڑیں گے۔ اپنی عزت بچانے کیلئے میں نے بہت منت سماجت کی اور کہا کہ میں بہت غریب ہوں میرے پاس اتنے پیسے نہیں ہیں۔ بالآخر پیر نے کہا کہ30000 ہزار دو تو کام کر دوں گا۔3 دن بعد میں پیسوں کا انتظام کر کے پیر کے پاس گئی تو پیر پہلے ہی نشے میں دھت بیٹھا تھا۔ مجھے ایک الگ کمرے میں لے جا کر بداخلاقی کی۔ جاتے ہوئے ایک تعویز دیا اور کہا جاؤ آپ کا کام ہو جائے گا۔کچھ دن بعد میرے شوہر کو پتا چل جانے پر اس نے مجھے طلاق دیتے ہوئے 3 بچوں سمیت گھر سے نکال دیا۔اپنی عزت کو بچانے کیلئے میں نے آج تک کسی سے ذکر نہ کیا اور چپ چاپ کبیروالا چھوڑ گئی ہوں۔ میڈیا کے ذریعے اس جعلی پیر بارے پتہ چلنے پر میں نے اس کے خلاف آواز بلند کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر