میر چاکر خان رند یونیورسٹی ‘ 345ملین کی بجٹ سفارشات منظور

  میر چاکر خان رند یونیورسٹی ‘ 345ملین کی بجٹ سفارشات منظور

  



ڈیرہ غازیخان;252; (نمائندہ خصوصی);58;چیئرمین فنانس کمیٹی ورئیس میر چاکر خان رند یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی پروفیسر ڈاکٹر محمد طفیل (تمغہ امتیاز) نے فنانس اینڈ پلاننگ کمیٹی میں پیش کردہ سال 2019-20 کے بجٹ کی حتمی منظوری دے دی ہے ۔ امسال 345;46;384ملین روپے کے بجٹ کی سفارشات منظور ہوئی ہیں ۔ بجٹ کی نمایاں خصوصیات میں نئی پوسٹوں کا اجراء ، 19 نئے دفاتر کا قیام اور ان میں 217 نئی آسامیاں ، 6 تدریسی شعبہ جات میں 114 نئی آسامیاں منظور کی گئی ہیں ۔ اس طرح 331 آسامیوں کو بجٹ کا حصہ بنایا(بقیہ نمبر38صفحہ12پر )

گیا ہے تاکہ جامعہ کی بنیادی افرادی قوت کو پورا کیا جا سکے، بی ایس ٹیکنالوجی پروگرامز کے شرح فیس کی منظوری بھی دی گئی جو پنجاب کی دیگر ٹیکنالوجی کی جامعات میں سب سے کم رکھی گئی تاکہ پسماندہ علاقے کے لوگوں کی تعلیمی پیاس کو بجھایا جا سکے ۔ اس کمیٹی نے یونیورسٹی کے ملازمین کو بیک وقت ایک بچے;47;بچی کو مفت تعلیم دینے کی سفارشات کو منظور کیا ۔ ان کے علاوہ یونیورسٹی میں اضافی ڈیوٹی کرنے والے ملازمین و افسران اور امتحانی معاوضہ جات کی منظوری بھی دی گئی ۔ جامعہ کی ڈیجیٹلائیزیشن کرنے کے لیے خطیر رقم مختص کی گئی ہے ۔ اس بجٹ کو حتمی منظوری کے لیے آئندہ سنڈیکیٹ کے اجلاس میں پیش کیا جائے گا ۔ فنانس اینڈ پلاننگ کمیٹی نے موجودہ وائس چانسلر کی زیر نگرانی بہتر فنانشل مینجمنٹ کے لیے کیے گئے اقدامات کی تعریف کی جس کی وجہ سے میر چاکر خان رند یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی کو مکمل طور پرپنجاب کی ایک اعلیٰ ترین درسگاہ میں تبدیل کیا جائے گا ۔ اجلاس میں خازن ڈاکٹرمحمد ضیا ء اللہ کے علاوہ ڈاکٹراللہ بخش گلشن ،ڈاکٹر محمد مدثر مقبول، اعجاز حسین ،محمد عمران بھٹی اورپروفیسر مظہر حسین گشکوری نے شرکت کی ۔

شفارشات

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...