سپریم کورٹ نے طاہر القادری کی پٹیشن خارج کر دی

سپریم کورٹ نے طاہر القادری کی پٹیشن خارج کر دی
 سپریم کورٹ نے طاہر القادری کی پٹیشن خارج کر دی

  


 اسلا م آباد ( ما نیٹرنگ ڈیسک ) سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن کی تحلیل کے حوالے سے ڈاکٹر طاہر القادری کی درخواست مسترد کر دی۔   سپریم کورٹ نے فیصلے میں کہا ہے کہ ڈاکٹر طاہر القادری کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی بنتی ہے لیکن تحمل کا مظاہرہ کرتے ہوئے کارروائی نہیں کر رہے۔اس سے قبل دوران سماعت چیف جسٹس نے استفسارکیا کہ موجودہ الیکشن کمیشن کی تشکیل سے آپ کا کو ن سا بنیادی حق متاثر ہوا ہے،پاکستان میں آپ کب رکن پارلیمنٹ منتخب ہوئے ، جس پر طاہرالقادری نے کہا کہ دو ہزار دو میں حلقہ این اے ایک سو ستائس سے وہ منتخب ہوئے اور دو ہزار چار میں مستعفی ہوگئے۔عدالت کے لگاتار سوالات پر طاہر القادری نے کہاکہ عدالت کے سوالات کے نتیجے میں ان کا میڈیا ٹرائل ہو رہا ہے اور میری وفاداری پر شک کیا جا رہا ہے جس پرچیف جسٹس نے کہا کہ میڈیا ٹرائل سے عدالت کا کوئی تعلق نہیں، آپ اپنے بنیادی حق کے بارے میں دلائل دیں، ملک میں منتخب نمائندے موجود ہیں انھیں الیکشن کمیشن سے کوئی شکایت نہیں، آپ کو مطمئن کرنا ہوگا کہ آپ دسمبر میں واپس آئے اور ایک مہینے میں آپ کو الیکشن کمیشن سے شکایت کیسے ہو گئی،چیف جسٹس نے کہاکہ آپ ناراض نہ ہوں لیکن بطورمسلمان ہمیں یہ پتا ہونا چاہئے کہ ہمیں کس سے وفاداری کا حلف اٹھانا ہے۔طاہرالقادری نے چیف جسٹس کو مخاطب کرتے ہوئے کہا آپ نے پرویزمشرف سے پی سی اوکا حلف لیا اور چیف جسٹس کی مشرف سے حلف لیتے تصویردکھائی جس کے بعد عدالت نے طاہرالقادری کو دلائل دینے سے روک دیا۔بعدازاں اٹارنی جنرل نے اپنے دلائل میں کہا کہ طاہر القادری کو اپنے تحفظات عدالت میں بیان کرنے کا حق حاصل ہے۔تاہم ان کا کہنا تھا پٹیشن تاخیر سے دائر ہونے کا سوال درست ہے،جائزہ لینا چاہئے کہ یہ درخواست بدنیتی پرمبنی تونہیں۔

مزید : اسلام آباد