اوبامہ کا نواز شریف کو فون ،دورہ بھارت پر اعتماد میں لیا ،آپریشن ضرب عضب کی تعریف

اوبامہ کا نواز شریف کو فون ،دورہ بھارت پر اعتماد میں لیا ،آپریشن ضرب عضب کی ...

 اسلام آ باد(آن لائن)وزیراعظم نواز شریف نے ترکمانستان ،افغانستان ، پاکستان، بھارت (تاپی) گیس پائپ لائن منصوبے پر جلد کام شروع کرنے سمیت ایل این جی کی درآمد کیلئے چین ،ملائیشیا، الجزائراورنائیجیریا کے ساتھ مذاکرات شروع کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت بجلی کی پیداوار کے لئے تمام وسائل استعمال میں لا رہی ہے، عوام کو مناسب نرخوں پر بجلی کی فراہمی حکومت کی ترجیح ہے۔ وزیراعظم نواز شریف کی زیرصدارت توانائی کمیٹی کا نواں اجلاس منعقد ہوا جس میں گیس پائپ لائن منصوبے سمیت مختلف امور پر وزیراعظم کو بریفنگ دی گئی۔ حکام نے وزیراعظم کو ملک میں تیل کی طلب اور رسد سمیت تاپی گیس پائپ لائن منصوبے اور ایران سے بجلی کی درآمد سے متعلق بریفنگ بھی دی،اجلاس میں کوئلے اور ایل این جی منصوبوں سمیت ملک میں توانائی بحران پر فوری قابو پانے اور جاری منصوبوں پر ہونے والی پیشرفت کا جائزہ لیا گیا۔ اس موقع پراجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے حکام کو ہدایت کی کہ تاپی گیس پائپ لائن منصوبے پر جلد آغاز کے لئے فوری اقدامات کئے جائیں،کیونکہ یہ منصوبہ خطے کی ترقی کیلئے نہایت اہمیت کا حامل ہے۔انہوں نے کہا کہ عوام کو مناسب نرخوں پر بجلی کی فراہمی حکومت کی ترجیح ہے، سستے نرخوں پر بجلی کی پیداوار میں اضافے کے لئے تمام وسائل بروئے کار لائے جارہے ہیں۔وزیراعظم نے ایل این جی کی درآمد کیلئے چین ،ملائیشیا، الجزائراورنائیجیریا کے ساتھ مذاکرات شروع کرنے کیلئے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ وہ ایل این جی کی درآمد کیلئے بروقت ادائیگیاں یقینی بنانے کیلئے مربوط نظام وضع کریں۔کمیٹی کو بتایاگیا کہ ایل این جی کی درآمد کیلئے قطر کے ساتھ بات چیت جاری ہے۔اجلاس میں وزیرِ خزانہ اسحاق ڈار، وزیرِ پانی و بجلی خواجہ آصف، وزیرِ پیٹرولیم شاہد خاقان عباسی ، احسن اقبال، وزیرِ ریلوے سعد رفیق، وزیرِ اعلیٰ پنجاب شہباز شریف، عابد شیر علی سمیت اعلی حکام بھی شریک تھے۔واضح رہے کہ گزشتہ روز وزیراعظم نے چنیوٹ میں معدنی ذخائر منصوبے کے دورہ کے موقع پر اپنے خطاب کے دوران اعلان کیا تھا کہ ملک سے توانائی بحران کا خاتمہ اپنے دور حکومت میں ہی کریں گے۔

اسلام آباد(آن لائن)امریکی صدرباراک اوبامہ نے وزیراعظم محمدنوازشریف کودورہ بھارت پراعتمادمیں لیتے ہوئے دہشتگردی کے خلاف جنگ میں ہرممکن مددکی یقین دہانی کرادی ۔ترجمان وزیراعظم ہاؤس کے مطابق امریکی صدرنے جمعرات کی شب وزیراعظم محمدنوازشریف کوفون کیادونوں رہنماؤں کے درمیان 30منٹ سے زائدجاری رہنے والی گفتگومیں پاک امریکہ تعلقات خطے کی صورتحال ،افغانستان سے متعلق اموراورامریکی صدرکے دورہ بھارت کے حوالے سے تبادلہ خیال کیاگیا۔امریکی صدرنے وزیراعظم کوحالیہ دورہ بھارت پراعتمادمیں لیااورکہاکہ امریکہ پاکستان کواہم اتحادی سمجھتاہے ۔انہوں نے کہاکہ امریکہ دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی ہرممکن مددکریگا اور افغانستان کے ساتھ پاکستان کے مثبت تعلقا ت کا خواہاں ہے ۔انہوں نے کہا کہ امریکہ افغانستان میں پاکستان کے مثبت کردار کو سراہتا ہے ۔انہوں نے کہا پاک فوج کے آپریشن ضرب عضب کو سراہتے ہوئے کہا کہ دہشت گردوں کیخلاف آپریشن کا فیصلہ قابل تحسین ہے ۔اس موقع پر وزیر اعظم نواز شریف نے بھارت کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں مستقل رکنیت کے حوالے سے تحفظات سے امریکی صدر کو آگاہ کیا اور کہا کہ بھارت کسی طور پر بھی سلامتی کونسل میں مستقل رکنیت کا اہل نہیں ہے ،انہوں نے کہا کہ بھارت کشمیر کے معاملے اقوام متحدہ کی قراردادوں کی خلاف ورزی کررہاہے۔ان کا کہنا تھاکہ پاکستان نیوکلیر گروپ کا رکن بننا چاہتاہے ۔

مزید : صفحہ اول