سمیڈ انے آئندہ بجٹ کیلئے ملک گیر مشاورتی عمل شروع کردیا

سمیڈ انے آئندہ بجٹ کیلئے ملک گیر مشاورتی عمل شروع کردیا

 لاہور(کامرس رپورٹر)سمال اینڈ میڈیم انٹر پرائزز ڈویلپمنٹ اتھارٹی ’سمیڈا ‘ نے وفاقی بجٹ 2018-19 کیلئے تجاویز کے حصول کیلئے ملک گیر مشاورتی عمل شروع کر دیا ہے۔ سمیڈا کے ذرائع کے مطابق ا س سلسلے میں ایس ایم ای سیکٹر سے متعلق مختلف ایوانہائے صنعت و تجارت ، صنعتی و تجارتی ایسوسی ایشنوں اور شعبہ جاتی ترقیاتی کمپنیوں سمیت کل 250 اداروں سے تحریر ی طور پر رابطہ کیا گیا ہے جنہیں درخواست کی گئی ہے کہ وہ ٹیکسوں کی شرح، ریگولیٹری ضابطوں اور ایس ایم ای سے متعلقہ دیگر امور سے متعلق اپنی سفارشات رواں ماہ کے اختتام تک سمیڈا میں بھجوادیں۔سمیڈا کے چیف ایگزیکٹو آفیسر شیر ایوب نے پالیسی سازی کی اہمیت پر تبصرہ کرتے ہوئے اعتراف کیا ہے کہ وفاقی بجٹ اور تجارتی پالیسی ملک میں کاروباری ماحول کا تعین کر تے ہیں اس لئے ایس ایم ای سیکٹر سے وابستہ کاروباری برادری کو چاہیے کہ وہ بجٹ سازی کے عمل میں ایس ایم ای دوست اقدامات عمل میں لانے کیلئے سمیڈا کا بھر پور ساتھ دیں۔انہوں نے کہا کہ ایس ایم ای سیکٹر کا سب سے بڑا وکیل ہونے کے ناطے سمیڈا حکومت اور ایس ایم ای سیکٹر کے درمیان ایک مضبوط پل کی مانند ہے اگرچہ، سمیڈا وزارت صنعت وپیداوار کے توسط سے ایس ایم ای دوست اقدامات کو عمل میں لانے کیلئے ہمہ وقت کوشا ں رہتا ہے۔ لیکن اس مقصد کیلئے وفاقی بجٹ بہترین ذریعہ ہے ۔ انہوں نے بتا یا کہ ایس ایم ای سیکٹر کے سٹیک ہولڈرز کی طرف سے بجٹ تجاویز کے تحریری حصول کے علاوہ، سمیڈا آئیدہ ماہ کے دوران چاروں صوبوں میں پیش از بجٹ مشاورتی ورکشاپس کا بھی انعقاد کرے گا جس کے بعد ایس ایم ای سیکٹر سے متعلق تمام تر قابل عمل تجاویز کو وزارت صنعت وپیداوار کے توسط سے حکومت تک پہنچا دیا جائے گا۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ سٹیٹ بنک آف پاکستان، وزارت صنعت و پیداوار اور سمیڈا کی کوششوں کے باوجود ، آزادانہ تجزیوں کے مطابق ابھی تک یہ تاثر عام ہے کہ ملک کی مالیاتی پالیسیوں کا رخ چھوٹے اور درمیانی کاروبار وں کی بجائے بڑی صنعتوں کی جانب ہے جس بنا پر مالیاتی سہولتوں اور ترقیاتی بجٹ کا بہت کم حصہ ایس ایم ای سیکٹر کے حصے میں آتا ہے ۔ سمیڈا کی انتظامیہ پر امید ہے کہ اس برس وفاقی بجٹ کی مراعات کا رخ بڑی صنعتوں کی بجائے ایس ایم ایز کی طرف ہوگا۔

مزید : کامرس /رائے

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...