منی لانڈرنگ کیس، ایف آئی اے نے ایم کیو ایم کے 10رہنماؤں کو طلب کر لیا

منی لانڈرنگ کیس، ایف آئی اے نے ایم کیو ایم کے 10رہنماؤں کو طلب کر لیا

اسلام آباد (آئی این پی) ایف آئی اے کے انسداد دہشت گردی ونگ نے بانی ایم کیو ایم کے خلاف منی لانڈرنگ کیس میں تحقیقات کا دائرہ وسیع کر دیا،ایم کیو ایم کے 10رہنماؤں کو طلب کرلیاگیا،طلب کئے جانے والے ایم کیو ایم کے رہنما مبینہ طور پر بھتہ، چائنہ کٹنگ و دیگر ذرائع سے حاصل ہونے والی رقوم ایم کیو ایم لندن سیکرٹریٹ کو بھجوانے میں ملوث رہے ہیں،مجموعی طور پر2ارب روپے پاکستان سے برطانیہ بھجوائے گئے۔ایف آئی اے ذرائع کے مطابق بانی ایم کیو ایم الطاف حسین کے خلاف منی لانڈرنگ کیس میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔ جس کے مطابق ایم کیو ایم کے 10رہنماؤں کی طرف سے خدمت خلق فاؤنڈیشن کے ذریعے برطانیہ بھجوائی جانے والی 2ارب روپے کی خطیر رقم کا سراغ لگایا گیا ہے، یہ رقوم پاکستان بالخصوص کراچی سے بھتے، چائنہ کٹنگ اور دیگر ذرائع سے حاصل کر کے خدمت خلق کے اکاؤنٹس میں جمع کروائی گئی جہاں سے منی لانڈرنگ کر کے ایم کیو ایم لندن سیکرٹریٹ کو بھیجی گئی، جن رہنماؤں نے یہ رقوم اکٹھی کیں اور خدمت خلق فاؤنڈیشن کو جمع کرائیں ان میں کیف الورا، ڈاکٹر صغیر احمد ، محمد شاہد ، محمد زبیر ، محمد طاہر ، منظور احمد ،رف مغل اور محمد عمران،رفیق راجپوت ، کمال صدیقی شامل ہیں۔ایف آئی اے ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم رہنما کیف الورا نے مختلف سالوں میں15 کروڑ سے زائد رقم خدمت خلق فاؤنڈیشن میں جمع کروائی،محمد شاہد نے ایک سال میں ایک کروڑ 40لاکھ روپے خدمت خلق فاؤنڈیشن میں جمع کروائے ،ڈاکٹر صغیر نے 16لاکھ 50 ہزار خدمت خلق فاؤنڈیشن میں جمع کروائے،منی لانڈرنگ کے ذریعے برطانیہ بھیجی گئی رقم لندن سیکرٹریٹ وکلا کی فیس ، سیکیورٹی کمپنی اور ذاتی اخراجات سمیت دیگر امور پر خرچ کرتا رہا۔

رقم

مزید : صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...