چارسدہ ،غنڈہ کرکنہ کی ہزاروں بچیاں تعلیم سے محروم

چارسدہ ،غنڈہ کرکنہ کی ہزاروں بچیاں تعلیم سے محروم

چارسدہ(بیورو رپورٹ) صوبائی حکومت کی تعلیم کے میدان میں انقلابی اقدامات اور دعوؤں کے باوجود چاسدہ کے علاقہ غنڈہ کرکنہ کی ہزاروں بچیاں سکول نہ ہونے کی وجہ سے تعلیم سے محروم ۔ عمائدین علاقہ نے متعدد بار حکومت سے لڑکیوں کے مڈل اور ہائی سکول کے قیام کا مطالبہ کیا لیکن آج تک اس پر کوئی عمل درآمد نہیں ہوا ہے۔تفصیلات کے مطابق خیبرپختونخوا حکومت ایک طرف تعلیم کے میدان میں ا نقلابی اصلاحات کے دعوے کر رہی ہے جس میں ہر یونین کونسل میں سکولوں کے قیام اور سکولوں میں بہترین تعلیمی ماحول اور سہولیات کی فراہمی شامل ہے لیکن حکومتی دعوؤں کے برعکس چارسدہ کے بعض یونین کونسلوں کی طرح غنڈکرکنہ کے یونین کونسل میں اس وقت ہزاروں بچیاں پرائمری تک تعلیم حاصل کرنے کے بعد مزید تعلیم حاصل کرنے سے محروم ہیں جس کی بنیادی وجہ علاقے میں مڈل اور گرلز ہائی سکول کا نہ ہو نا ہے ۔ اس حوالے سے علاقہ عمائدین کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے متعدد بار ضلعی انتظامیہ اور ممبر صوبائی اسمبلی کو آگا ہ کیا ہے لیکن کوئی شنوائی نہیں ہو رہی ہے ۔ عمائدین علاقہ نقیب خان ،عبدلاسلام عارف ،عبدلغفور خان اور دیگر نے بتایا کہ ان کے یونین کونسل میں ہزاروں کی تعداد میں لڑکیاں پرائمری تک تعلیم حاصل کر لیتی ہے لیکن کونسل غنڈہ کرکنہ اور قرب و جوار کے دیگر یونین کونسلوں میں لڑکیوں کے مڈل اور ہائی سکول نہ ہونے کی وجہ سے ان کی بچیاں مزید حصول تعلیم سے محروم ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ پسماندہ علاقہ ہونے کی وجہ سے والدین دور دراز علاقوں میں قائم سکولوں کو بچیاں نہیں بھیج سکتے کیونکہ غربت کی وجہ سے ان کے پاس ٹرانسپورٹ کے پیسے نہیں ہو تے ۔اس حوالے سے خاتون اسسٹنٹ کمشنر طلعت فہد نے رابطہ کرنے پر اپنے موقف میں کہا کہ اس وقت چارسدہ میں ہزاروں کی تعداد میں بچے سکولوں سے باہر ہیں جس میں اکثریت ایسے بچوں کی ہے جو سکول تک رسائی نہیں رکھتے اس لئے ضلعی انتظامیہ کی جانب سے مذکورہ علاقہ میں لڑکیوں کے سکول کے قیام کے لئے صوبائی حکومت کو سفارشات بھیج دئیے جائینگے تاکہ جلد از جلد ایسے علاقوں میں سکولوں کا قیام یقینی بنا یا جا سکے ۔

مزید : کراچی صفحہ اول