ٹیکسٹائل سمیت متعدد شعبوں کو گیس کی سپلائی بند کرنا قابل مذمت ہے، امیر العظیم

ٹیکسٹائل سمیت متعدد شعبوں کو گیس کی سپلائی بند کرنا قابل مذمت ہے، امیر العظیم

لاہور( نمائندہ خصوصی) امیر جماعت اسلامی صوبہ وسطی پنجاب امیر العظیم نے کہا ہے کہ سوئی نادرن گیس کی جانب سے پاور فرٹیلائزر ، سی این جی، ٹیکسٹائل سمیت متعدد شعبوں کو گیس کی سپلائی بند کرنا قابل مذمت ہے۔ اس سے گھریلوصارفین کے ساتھ ساتھ تاجر برادری کی مشکلات میں اضافہ ہوگا۔ ایک طرف عوام کو گیس دستیاب نہیں تو دوسری طرف رہی سہی کسر گیس کے بلوں میں ہوشر با اضافے نے پوری کردی ہے۔

ان خیالات کا اظہار انھوں نے گزشتہ روزلاہور میں مختلف پروگرامات سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ امیر العظیم نے کہا کہ ملک میں مسائل کے انبار لگے ہیں۔ صرف پنجاب میں 48لاکھ بچے اور پورے ملک میں اڑھائی کروڑ بچے اسکول جانے کی بجائے مختلف کارخانوں، ورکشاپوں، بھٹوں، ہوٹلوں اور دکانوں پر کام کررہے ہیں۔ اس حوالے سے قوانین کی بھر مار ہونے کے باوجود بہتری دکھائی نہیں دیتی۔ پرائیویٹ اسکولوں نے تعلیم کو فروغ علم سے زیادہ کاروبار کا ذریعہ بنالیا ہے۔ مفت اور معیاری تعلیم ہر بچے کا بنیادی حق ہے ،اس حوالے سے ریاست کی ذمہ داری ہے کہ ہنگامی بنیادوں پر عملی اقدامات کرے۔ انھوں نے کہا کہ موجودہ حکمرانوں کو برسر اقتدار آئے چھ ماہ ہونے کو ہیں مگر کسی بھی شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والا شخص حکومتی کارکردگی سے خوش نہیں۔ لاقانونیت کی انتہاہوچکی ہے۔ لاہور سمیت پورے صوبے میں چوری، ڈکیتی، اغوا برائے تاوان ، قتل و غارت گری اور مختلف قسم کی وارداتیں عام ہیں۔ پولیس اور قانون نافذ کرنے والے دیگر ادارے خاموش تماشائی بنے بیٹھے ہیں۔ امیر العظیم نے مزیدکہاکہ تھانہ کلچر جرائم پیشہ افراد کی آماجگاہ بن گئے ہیں۔ با اثر افراد کے لیے قانون موم کی ناک اور غریبوں کا کوئی پرسان حال نہیں ۔ شریف آدمی اپنے ساتھ واردات ہونے کے باوجود پولیس اسٹیشن جانے سے گھبراتا ہے۔ عوام کی کسی بھی سطح پر کوئی شنوائی نہیں ہورہی۔ سسٹم کو بدلنے کے دعویداروں نے بھی لوگوں کو مایوس کیا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1