آٹا اور چینی کا بحران پیدا کرنیوالے حکومتی صفوں میں بیٹھے ہیں:سراج الحق

آٹا اور چینی کا بحران پیدا کرنیوالے حکومتی صفوں میں بیٹھے ہیں:سراج الحق

  



لاہور (نمائندہ خصوصی) امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ ملک مافیا کی گرفت میں ہے سب سے خطرناک پیاروں کا مافیا ہے۔ حکومت نے عوام کو ریلیف دینے کے بجائے یوٹیلیٹی سٹورز پر بھی گھی اور چینی کی قیمتوں میں اضافہ کردیا ہے،دیہات میں رہنے والی 70فیصد غریب آبادی کی یوٹیلیٹی سٹورز تک پہنچ ہی نہیں،حکومت کا ریلیف پیکیج اونٹ کے منہ میں زیرے کے برابر بھی نہیں،مہنگائی کی وجہ سے(بقیہ نمبر22صفحہ12پر)

کم عمر بچے سکول چھوڑ کر محنت مزدوری کرنے پر مجبور ہیں،بہتر ہے حکومت اپنی ناکامی کا اعتراف کرکے اقتدار سے الگ ہوجائے۔دہلی میں مودی کو عبرت ناک شکست،لوگوں نے مودی کو آئینہ دکھا دیا ہے،مودی مسلم دشمنی سے باز نہ آیا تو پورے ہندوستان میں یہی حال ہوگا،ہندوستان کے اجتماعی ضمیر نے مودی کی انتہا پسندانہ پالیسیوں کو مسترد کردیا ہے۔گزشتہ روزیہاں منصورہ میں مرکزی تربیت گاہ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے سراج الحق نے کہا کہ وزیراعظم کو اپنے پیاروں کا احتساب کرنا ہوگا۔جب تک پیاروں کا احتساب نہیں ہوتاتب تک معیشت سنبھلے گی نہ ملک چلے گا۔ جس ملک میں کرپشن اور بد انتظامی ہو وہاں ترقی نہیں ہوتی۔ ملک میں پناہ گاہیں اور لنگر خانے کھول کر غریب عوام کا مذاق اڑایا جارہا ہے۔غربت،مہنگائی اور بیر وزگاری کے خاتمہ کیلئے کارخانے کھولنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کے ہوتے ہوئے عوام کو ریلیف نہیں مل سکتا۔حکمرانوں میں یہ صلاحیت اور اہلیت ہی نہیں کہ وہ ملک کو کسی بہتری کی طرف لے جائیں۔ نااہل ٹولے نے ملک کا حشر کردیا ہے۔آٹا اور چینی کا بحران پیدا کرنے والے حکومتی صفوں میں اور وزیر اعظم کے ارد گرد بیٹھے ہوئے ہیں۔موجودہ دور حکومت میں چالیس لاکھ کے قریب لوگ خط غربت سے نیچے لڑھک گئے ہیں۔ خود دولت کے انبار لگارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ان بحرانوں میں اگر اپوزیشن کا کوئی آدمی ملوث ہوتا تواب تک حوالات کی سلاخوں کو پیچھے ہوتا۔

سراج الحق

مزید : ملتان صفحہ آخر