دہشتگردوں کی مالی معاونت پر حافظ سعید اور ظفراقبال کو 11سال قید، 30ہزار جرمانہ

دہشتگردوں کی مالی معاونت پر حافظ سعید اور ظفراقبال کو 11سال قید، 30ہزار جرمانہ

  



لاہور(نامہ نگار)انسداد دہشت گردی کی عدالت نے امیر جماعت الدعوۃ پروفیسر حافظ سعید اور ملک ظفر اقبال کو دہشت گردوں کی مالی معاونت کے جرم میں مجموعی طور پر11سال قید اور30ہزار روپے جرمانے کی سزا سنادی ہے،جرمانہ کی عدم ادائیگی پر مجرموں کو مزید10دن قید کی سزابھگتنا ہوگی،عدالت نے27صفحات پرمشتمل تحریری فیصلہ جاری کردیاہے،انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج ارشد حسین بھٹہ نے لاہور اور گوجرانوالہ میں جماعت الدعوۃ کی جائیدادوں کوٹیررفنانسنگ کے ذیعے خریدنے، استعمال کرنے اورکالعدم تنظیم سے تعلق رکھنے،دہشت گردوں کی مالی معاونت وغیرہ کے جرم میں پروفیسرحافظ سعید اور ان کے ساتھی ملک ظفراقبال کودو مقدمات میں ساڑھے 5،5سال قید اور 15، 15 ہزار روپے جرمانے کی سزا کا حکم سنایاہے۔کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) پولیس نے سال 2000ء میں حافظ سعید اور ملک ظفر اقبال کے خلاف فنڈ ریزنگ اور غیر قانونی پراپرٹی بنانے،کالعدم تنظیموں سے تعلق اور دہشت گردوں کی مالی معاونت کے الزام کے تحت 2 مقدمات درج کرنے کے بعدمقدمات کا چالان عدالت میں جمع کروادیاتھاجس کے بعد عدالت نے باقاعدگی سے اس کیس کی سماعت کی،دونوں مقدمات میں ملزموں کے خلاف 23 گواہوں نے عدالت میں بیانات قلمبند کرائے، ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل عبدالرؤف وٹو نے گزشتہ روز ملزموں کے خلاف الزامات کے حق میں دلائل دیئے جبکہ ملزموں کے وکیل عمران گل نے الزامات کی مخالفت کی،کیس کی سماعت کے موقع پرسکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے تھے اور عدالت کے اندر اور باہر پولیس کی بھاری نفری تعینات رہی۔

حافظ سعید/سزا

مزید : صفحہ اول