نیب ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس، شاہد خاقان سمیت کئی شخصیات کیخلاف بد عنوانی ریفرنس دائر کرنے کی منظوری

    نیب ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس، شاہد خاقان سمیت کئی شخصیات کیخلاف بد عنوانی ...

  



اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) نیب ایگزیکٹو بورڈ نے شاہد خاقان عباسی،شیخ عمران الحق،یعقوب ستار اور دیگرکے خلاف بد عنوانی کا ریفرنس دائر کرنے جبکہ سابق وفاقی وزیر برجیس طاہر رکن قومی اسمبلی مخدوم زادہ سید باسط احمد سلطان، سردار نصراللہ خان دریشک،خالد سجاد کھوکھر، سابق ایم ڈی پاکستان منرل ڈویلپمنٹ کارپوریشن اورور دیگر کیخلاف انکوائریوں کی منظوری دیدی۔ تفصیلات کے مطابق قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس(ر) جاوید اقبال کے زیرصدارت نیب ہیڈکوارٹر زمیں منعقد ہوا۔اجلاس میں ڈپٹی چیئرمین نیب، پراسیکیوٹر جنرل نیب،ڈی جی آپریشن نیب اور دیگر سینئر افسروں نے شرکت کی۔ قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ اجلاس میں شاہد خاقان عباسی،شیخ عمران الحق، سابق ایم ڈی پی ایس او،یعقوب ستار ڈپٹی ایم ڈی پی ایس او اور دیگرکے خلاف بد عنوانی کا ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دی گئی۔ملزمان پر اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال اور قواعد و ضوابط کو بالائے طاق رکھتے ہوئے سابق ایم ڈی پی ایس او اور ڈی ایم ڈی پی ایس او کی تقرری عمل میں لانے کاالزام ہے۔جس سے قومی خزانے کو 138.96 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔ اجلاس میں غلام علی شاہ پاشاہ سابق سینئر رکن بورڈ آف ریونیو حکومت سندھ، عبد الصبحان میمن سابق سیکرٹری لینڈ یوٹیلائزیشن،محمد سالک سابق ڈسٹرکٹ آفیسرریونیو حیدر آباد، گڈا حسین ابرو سابق مختیارکر ریونیو، امتیاز سولنگی سابق سپروائزنگ تپیدار، قادر بخش اور محمد سلیم کے خلاف بد عنوانی کاریفرنس دائر کرنے کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر سرکاری زمین کو غیر قانونی طور پر الاٹ کرنے کاالزام ہے۔جس سے قومی خزانے کو120 ملین رو پے کا نقصان پہنچا۔ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں غلام مصطفے پھل سابق سکیرٹری لینڈ یوٹیلائزیشن سندھ, قاضی جان محمدسابق ڈی سی ملیر،عبد الصبحان سابق سیکرٹری لینڈ یوٹیلائزیشن،غلام حیدر چانڈیو سابق اسسٹنٹ کمشنر، محمد عارف کلواراسسٹنٹ کمشنربن قاسم ٹاؤن ملیر، طفیل احمد، سابق مختیار کا ر، ذوالفقار علی منگی سابق مختیار کا راورمحمد ایوب کے خلاف بد عنوانی کا ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر سرکاری زمین کو غیر قانونی طور پر الاٹ کرنے کاالزام ہے۔ جس سے قومی خزانے کو 4کروڑ روپے کا نقصان پہنچا۔قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں 7 انکوائریوں کی منظوری دی گئی جن میں برجیس طاہر وفاقی وزیر، سلیم گو رائیہ اور دیگر، مخدوم زادہ سید باسط احمد سلطان ایم این اے مظفر گڑھ اور دیگر، سردار نصراللہ خان دریشک ایم پی اے راجن پوراور دیگر،خالد سجاد کھوکھر، سابق ایم ڈی پاکستان منرل ڈویلپمنٹ کارپوریشن اور دیگر اورکینال گارڈن ہاوسنگ سکیم یازمان روڈ بہاولپور کے مالکان اور دیگر، پنجاب بائیو انرجی کمپنی لمیٹڈ کے افسران و اہلکاران اور دیگراورساؤتھ پنجاب فاریسٹ کمپنی کی انتظامیہ ا فسران و اہلکاران اور دیگر شامل ہیں۔ قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں 2انوسٹی گیشنز کی منظوری دی گئی۔جن میں پہلاج مل سابق سپیشل اسسٹنٹ ٹو وزیر اعلٰی سندھ اورالتمش میڈیکل سوسائٹی کے مالکان سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے افسران اور دیگر کے خلاف انوسٹی گیشنز کی منظوری شامل ہے۔قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں رحمان میڈیکل کالج پشاور اور دیگر کے خلاف انکوائری اب تک عدم شواہد کی بنیاد پرقانون کے مطابق بند کرنے کی منظوری دی گئی۔ قومی احتساب بیورو کے ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں منسٹری آف پرائیوٹائزیشن،پی ٹی سی ایل کے افسران /اہلکاران میسرز اتیصلات اور دیگر کے خلاف انکوائری حکومت کو ریفر کرنے کی منظوری دی گئی تا کہ حکومت قانو ن کے مطابق کیس کو دیکھے اور متعلقہ کیس کے بارے میں اپنی رائے دے جس کی روشنی میں نیب ایگزیکٹو بورڈ معاملہ کی قانون کے مطابق منظوری دے گا۔ چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نے کہا کہ نیب کا ایمان کرپشن فری پاکستان ہے۔نیب ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ اور بدعنوان عناصر سے لوٹی گئی رقوم برآمد کرنے کے ساتھ ساتھ میگا کرپشن کے وائٹ کالر مقدمات کو منطقی انجام تک پہنچا نے اور بڑے پیمانے پر جعلی ہاؤسنگ /کوآپریٹو سو سائیٹیوں سے عوام کی لوٹی گئی رقوم کی واپسی کو اولین ترجیح سمجھتاہے۔ انہوں نے کہا کہ نیب مضاربہ/مشارکہ کے 45 ملزمان کو گرفتار کرکے ان سے عوام کی لوٹی گئی اربوں روپے کی رقوم برآمد کرنے کیلئے کوشاں ہے۔ چیئرمین نیب نے کہا کہ نیب کے اس وقت 1275 بدعنوانی کے ریفرنسز معزز احتساب عدالتوں میں زیر سماعت ہیں جن کی مالیت تقریباََ 943 ارب روپے ہے۔انہوں نے نیب کے تمام ڈائریکٹر جنرلز کو ہدایت کی کہ شکایات کی جانچ پڑتال، انکوائریاں اور انوسٹی گیشنز مقررہ وقت کے اندر قانون کے مطابق منطقی انجام تک پہنچائی جائیں اور تمام انوسٹی گیشن آفیسرز اور پراسیکوٹرز پوری تیاری، ٹھوس شواہد اور قانون کے مطابق معزز عدالتوں میں نیب کے مقدمات کی پیروی کریں تاکہ بدعنوان عناصر کو قانون کے مطابق سزا دلوائی جاسکے۔

نیب/منظوری

مزید : صفحہ اول