امریکہ، اسرائیل و جرمنی کی پاکستان سمیت درجنوں ممالک کے خفیہ ڈیٹا تک رسائی

  امریکہ، اسرائیل و جرمنی کی پاکستان سمیت درجنوں ممالک کے خفیہ ڈیٹا تک رسائی

  



واشنگٹن (اظہر زمان، خصوصی رپورٹر) پاکستان، بنگلہ دیش اور بھارت سمیت درجنوں دوسرے ممالک نے سوئیزر لینڈ سے ایک ایسا آلہ خر ید ا تھا جس کا کام ڈیٹا کو خفیہ رکھنا ہوتا ہے لیکن انہیں اندازہ نہیں تھا کہ سی آئی اے سمیت غیر ملکی جاسوس ان کے اہم خفیہ ڈیٹا تک رسائی حا صل کر سکتے تھے۔ یہ چونکا دینے والا انکشاف واشنگٹن پوسٹ نے ایک تازہ رپورٹ میں کیا ہے، جس میں بتایا گیا ہے کہ امریکی سی آئی اے اور جرمنی کے جاسوس ادارے ”بی این ڈی“ نے مل کر سوئیزرلینڈ میں ”کرپٹواے جی“ (CRYPTO)کے نام سے بہت پہلے ایک کمپنی بنائی تھی جو ابھی حال ہی میں بند کی گئی ہے،امریکہ کی ڈی کلاسیفائی ہونیوالی دستاویزات کا حوالہ دیتے ہوئے اخبار نے بتایا ہے کہ جرمنی کا ادارہ 1990ء کے عشرے میں اس سے الگ ہو گیا تھا۔ اس دستاویزات سے یہ نہیں ظاہر ہوتا کہ اس آلے کو جنوبی ایشیا ء میں فروخت کرنے کا مقصد ان ممالک سے خفیہ ڈیٹا حاصل کرنا تھا، تاہم اس دستاویز سے پتہ چلتا ہے کہ ان جاسوسوں نے لیبیا کے حکام کو برلن میں 1986ء میں بمباری کرنے ہر ایک دوسرے کو مبارکباد دیتے ہوئے سنا تھا۔ ”واشنگٹن پوسٹ“ نے ایک نقشہ بھی جاری کیا ہے جس سے ظا ہر ہوتا ہے کہ اسٹریلیا اور انٹارٹیکا کے سواء تمام براعظموں میں یہ آلہ پہنچاتھا۔ تاہم یہ واضح ہے کہ امریکہ کے سب سے بڑے حریف روس اور چین اس کمپنی کے کبھی کسٹمر نہیں رہے۔ معلوم ہوا ہے اس الے کے ذریعے حساس ڈیٹا سے استفادہ صرف امریکہ اور جرمنی نہیں کررہے تھے بلکہ یہ دائرہ وسیع بھی ہوسکتا ہے۔ اخبار کے مطابق کم از کم اسرائیل، سویڈن، سوئیزر لینڈ اور برطانیہ اس کمپنی کے خفیہ آپریشن سے آگاہ تھے۔

ڈیٹا رسائی

مزید : صفحہ اول