خاتون ایک، مرد 2لیکن پھر خاتون نے دونوں کے درمیان کیسے فیصلہ کروایا؟ عدالت نے سزا سنا دی

خاتون ایک، مرد 2لیکن پھر خاتون نے دونوں کے درمیان کیسے فیصلہ کروایا؟ عدالت نے ...
خاتون ایک، مرد 2لیکن پھر خاتون نے دونوں کے درمیان کیسے فیصلہ کروایا؟ عدالت نے سزا سنا دی

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں ایک 35سالہ خاتون نے اپنے سابق شوہر اور محبوب میں سے کسی ایک کا انتخاب کرنے کے لیے قرون وسطیٰ کے دور کی طرح ان دونوں میں زندگی اور موت کی لڑائی کروا دی۔ میل آن لائن کے مطابق ایسٹا جسکاﺅسکین نامی یہ خاتون طلاق یافتہ اور تین بچوں کی ماں تھی۔ اس کے سابق شوہر 42سالہ جیڈریس کو لیتھوانیا میں خاتون کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے جرم میں قید کی سزا ہوئی۔

اس دوران ایسٹا نے 25سالہ منٹاس کیوڈریس نامی نوجوان کے ساتھ تعلقات استوار کر لیے۔ جب جیڈریس کی سزا پوری ہوئی اور وہ واپس برطانیہ پہنچا تو اس کی اپنی سابق بیوی کے ساتھ ملاقاتیں شروع ہو گئیں، جو اس کی ایک بیٹی کی ماں بھی تھی۔ جب دونوں مردوں کو ایک دوسرے کے بارے میں علم ہوا تو دونوں ہی ایسٹا پر اپنا حق جتانے لگے۔ اس پر ایسٹا نے دونوں کو ایک جگہ بلایا اور کہا کہ وہ دونوں آپس میں لڑیں اور جو اس لڑائی میں زندہ رہا وہ اس سے شادی کر لے گی۔ اس پر جیڈریس اور منٹاس گتھم گتھا ہو گئے۔

عدالت میں بتایا گیا کہ ایسٹا اور جیڈریس بظاہر ملے ہوئے تھے اور جیڈریس لڑائی کی پوری تیاری کے ساتھ آیا تھا۔ اس کے پاس خنجر بھی تھا جس سے اس نے منٹاس پر جان لیوا حملے کیے۔ منٹاس کو گردن، سینے اور کندھوں پر شدید زخم آئے اور وہ دو روز ہسپتال میں رہنے کے بعد دم توڑ گیا۔ یہ ہولناک واقعہ برطانوی علاقے کینٹ کے شہر ڈرٹ فورڈ میں پیش آیا۔ پولیس نے جیڈرس اور ایسٹا کو گرفتار کرکے عدالت میں پیش کر دیا جہاں سے اب دونوں کو عمر قید کی سزا سنا کر جیل بھجوا دیا گیا ہے۔

مزید : برطانیہ