حمدباری تعالیٰ

حمدباری تعالیٰ

الٰہی! حمد سے عاجز ہے یہ سارا جہاں تیرا

جہاں والوں سے کیونکر ہو سکے ذکر و بیاں تیرا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زمین و آسماں کے ذرّے ذرّے میں ترے جلوے

نِگاہوں نے جدھر دیکھا نظر آیا نشاں تیرا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ٹھکانہ ہر جگہ تیرا سمجھتے ہیں جہاں والے

سمجھ میں آ نہیں سکتا ٹھکانہ ہے کہاں تیرا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ترا محبوب پیغمبرﷺ تری عظمت سے واقف ہے

کہ سب نبیوں میں تنہا ہے وہی اک رازداں تیرا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جہانِ رنگ و بو کی وسعتوں کا رازداں تُو ہے

نہ کوئی ہمسفر تیرا، نہ کوئی کارواں تیرا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تری ذاتِ معّلٰے آخری تعریف کے لائق

چمن کا پتہ پتہ روز و شب ہے نغمہ خواں تیرا

مولانا احمد رضا خان بریلویؒ

مزید : ایڈیشن 1