”زینب کے مبینہ قاتل کا خاکہ 7 ماہ پہلے کا ہے جو پولیس نے۔۔۔“ زینب جیسی درندگی کا نشانہ بننے والی لائبہ کے والدین نے تہلکہ خیز انکشاف کر دیا، پاکستانیوں کا غصہ آسمان چھونے لگا

”زینب کے مبینہ قاتل کا خاکہ 7 ماہ پہلے کا ہے جو پولیس نے۔۔۔“ زینب جیسی ...

قصور (ڈیلی پاکستان آن لائن) معصوم زینب کے قتل کے بعد ملک بھر میں ہنگامہ برپا ہوا اور پوری قوم اس المناک واقعے پر آبدیدہ ہو کر مجرم کو پکڑنے اور قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہ کرنے لگی۔ مرکزی ملزم تو اب تو گرفتار نہ ہوا البتہ سی سی ٹی وی فوٹیجز اور پھر مجرم کا خاکہ ضرور جاری تاہم اب یہ انکشاف ہوا ہے کہ وہ خاکہ بھی 7 ماہ پرانا ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔”یہ عمران خان کی بیگم بشریٰ بی بی نہیں بلکہ۔۔۔“ بڑا دعویٰ سامنے آ گیا

یہ انکشاف کیا ہے قصور میں ہی اغواءاور پھر زیادتی کے بعد قتل ہونے والی 4 سالہ لائبہ کے والدین نے، جو لاہور میں انصاف کے حصول کی خاطر سراپا احتجاج ہیں اور ناکامی پر بچی کی لاش کو قبر سے نکال کر وزیراعلیٰ ہاﺅس کے سامنے اسے اور خود کو آگ لگانے تک کا فیصلہ کر چکے ہیں۔ 

معروف صحافی اور اینکر پرسن منصور علی خان لائبہ کے لواحقین سے گفتگو کرنے پہنچے تو انہوں نے بتایا کہ ”پولیس والے صرف یہ ہی کہتے ہیں کہ ان کی شکایت نہ لگے، راتوں رات لائبہ کو دفنا دیا اور اس کی و الدہ کو دھکے بھی دئیے۔ وزیراعلیٰ ہماری بات سنیں تو پھر ہے نا۔ ایک ماہ پہلے ہم نے فیصلہ کیا تھا کہ بچی کی قبرکشائی بھی کریں گے اور ماڈل ٹاﺅن میں وزیراعلیٰ کے گھر کے باہر بچی کی لاش کو اور خود کو بھی آگ لگا دیں گے۔“

جب ان سے سوال کیا گیا کہ لائبہ کے معاملے پر تو کوئی پیش رفت نہیں ہوئی، کیا آپ کو لگتا ہے کہ زینب کے معاملے میں کوئی پیش رفت ہو گی اور اسے انصاف ملے گا تو انہوں نے کہا کہ ”زینب کے معاملے پر ٹی وی پر مبینہ قاتل کا جو خاکہ دکھایا گیا ہے وہ سات مہینے پرانا ہے، لائبہ کے اغواءاور قتل کے بعد ہمیں بھی وہی خاکہ دکھایا گیا تھا، میں اس روز سے میڈیا کے سامنے کہہ رہا ہوں کہ یہ وہی خاکہ ہے جو سات ماہ پہلے ہمیں دکھایا گیا تھا، زینب کا معاملہ سامنے آنے پر پولیس نے ایمرجنسی میں میڈیا پر ایک مرتبہ پھر وہی خاکہ دکھا دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔وہ فیس بک گروپ جس نے معصوم زینب کے معاملے کا مذاق اڑانے میں کوئی کسر نہ چھوڑی، ایسی ایسی تصاویر شیئر کر دیں کہ ہر پاکستانی کا خون کھول اٹھا، دیکھ کر آپ غصے سے آگ بگولہ ہو جائیں گے

لاہور میں اس خاکے کی کاپی بھی موجود ہے جو ہمارے پاس بھی پڑی ہے، زینب کے لواحقین نے احتجاج کرتے ہوئے شہر بند کر دیا تو وزیراعلیٰ شہباز شریف رات کے اندھیرے میں آئے اور ملاقات کر کے چلے گئے، ہماری بھی بچی ہے لیکن ہمارے پاس نہیں آئے، ہم غریب ہیں اس لئے؟

ہمارے حلقے سے ایم این اے شیخ وسیم ہیں اور ایم پی اے نعیم صفدر ہے جو کسی بھی واقعے پر لواحقین کے گھر نہیں گئے۔ لائبہ بھی زینب کی طرح ساتھ والی گلی میں موجود گھر میں سپارہ پڑھنے گئی اور غائب ہو گئی، اگر وزیراعلیٰ کی بیٹی ہوتی تو لاکھوں پولیس والے اسے چھوڑنے جاتے۔“

لائبہ کے لواحقین نے مزید کہا کہ ایم این اے شیخ وسیم پولیس والوں کو بھیج کر پیسوں کی پیشکش کرتے رہے، کہ ہم پانچ لاکھ روپے دیتے ہیں اس کیس کو ختم کر دیں، جس دن وزیراعلیٰ کی طرف سے نوٹس لیا گیا تو ایس پی انویسٹی گیشن نے ایس ایچ اوز کو کہا کہ سمجھو ہماری فوتیدگی ہو گئی ہے، یہاں دریاں لا کر بچھاﺅ، تو ان کے کہنے پر کوئی نہیں آیا تو ہمارے کہنے پر کون آئے گا۔

۔۔۔ویڈیو دیکھیں۔۔۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /علاقائی /پنجاب /قصور

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...