روئی کے بھاؤ میں مندی کا رجحان برقرار ،نرخ 8800روپے فی من تک ریکارڈ

روئی کے بھاؤ میں مندی کا رجحان برقرار ،نرخ 8800روپے فی من تک ریکارڈ

کراچی (این این آئی)مقامی کاٹن مارکیٹ میں گزشتہ ہفتہ کے دوران روئی کے بھاؤ میں مجموعی طور پر مندی کا رجحان برقرار رہا جبکہ کاروباری حجم بھی نسبتا کم رہا۔ صوبہ سندھ وپنجاب میں روئی کا بھاؤ فی من 7000 تا 8800 روپے، پھٹی کا بھاؤ فی 40کلو 3000 تک 3800 روپے رہا۔ کراچی کاٹن ایسوسی ایشن کی اسپاٹ ریٹ کمیٹی نے اسپاٹ ریٹ فی من 8700 روپے کے بھا ؤپر مستحکم رکھا۔کراچی کاٹن بروکرزفورم کے چیئرمین نسیم عثمان نے بتایا کہ چین اور امریکا کے اقتصادی تنازع میں کچھ نرمی آنے کی امید بتائی جاتی ہے اگر معاملہ سلجھ گیا تو دنیا میں کاروباری بحران ختم ہو جانے کی امید ہے اگر ایسا ہوا تو مقامی اور بین الاقوامی منڈیوں میں کاروباری بحران کم ہوسکتا ہے۔ نسیم عثمان نے بتایا کہ ٹیکسٹائل سیکٹر کے کہنے کے مطابق جرمنی کے شہر فرینکفرٹ میں ہونے والی دنیا کی سب سے بڑی ٹیکسٹائل مصنوعات کی نمائش میں پاکستان کے برآمدکنندگان کو حوصلہ افزا برآمدی آرڈر ملے ہیں اس کی وجہ سے مقامی طور پر ملک میں ٹیکسٹائل سیکٹر کو کچھ تقویت ملنے کی امید کی جا رہی ہے بین الاقوامی کپاس مارکیٹوں میں مجموعی طور پر ملا جلا رجحان رہا۔ ملک میں اوپن اینڈ ملوں کی صورتحال مجموعی طور پر تسلی بخش ہونے کا ملزمالکان عندیہ دے رہے ہیں جبکہ اسپننگ ملز کے یارن میں پوچھ گچھ شروع ہونے کی اطلاعات ملی ہیں لیکن فی الحال ملک میں بے یقینی کی صورتحال بڑھتی جا رہی ہے جس کی وجہ سے کاروباری طبقہ اور صنعتکار اضطراب میں مبتلا ہیں۔ ملک میں روئی کی پیداوار 1 کروڑ 8 لاکھ گانٹھوں کے لگ بھگ ہونے کی توقع ہے جبکہ بیرون ممالک سے روئی کی 35 تا 40 لاکھ گانٹھیں درآمد کی جائیں گی تاحال بیرون ممالک سے روئی کی تقریبا 25 لاکھ گانٹھوں کے درآمدی معاہدے کرلئے گئے ہیں دریں اثنا آئندہ سیزن میں کپاس کی پیداوار بڑھانے کے لئے کاٹن سیمینار منعقد کیے جا رہے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان نے آئندہ سال کپاس کی پیداوار 1 کروڑ 50 لاکھ گانٹھیں کرنے کے عزم کا اظہار کیا ہے اس کے لئے مثبت حکمت عملی کی متعلقہ اداروں کو ہدایت کی ہے۔ حکومت نے کپاس کی درآمد سے تمام ٹیکس ختم کرنے کا عندیہ دیا ہے لیکن اقتصادی رابطہ کمیٹی نے فی الحال یہ معاملہ ریوینیو کمیٹی کو ارسال کردیا ہے ہوسکتا ہے کہ آئندہ دنوں پیش کئے جانے والے منی بجٹ میں اس کا اعلان کیا جائے

مزید : کامرس