تجاوزات کے نام پرشہریوں کے ساتھ ناانصافی کا سلسلہ جاری

تجاوزات کے نام پرشہریوں کے ساتھ ناانصافی کا سلسلہ جاری

پشاور(سٹی رپورٹر) تجاوزات کے نام پرشہریوں کے ساتھ ناانصافی کا سلسلہ جاری ہے انتظامیہ کی جانب سے مخصوص علاقوں کو ٹارگٹ بنا کر غریبوں سے روزگار چھیننے کی کوششیں کی جارہی ہیں جبکہ بااثر افراد کے ناجائز قبضے بدستوربرقرار ہے ا نتظامیہ نے تجاوزات کے نام پر جو آپریشن کیا وہ محض مذاق بن کر رہ چکاہے ، جن میں سرفہرست غریب ، مزدور ، محنت کش، دیہاڑی دار افراد متاثر ہوئے ہیں جبکہ شہر کے مرکزی بازاروں میں لگائے جانے والے نشانوں کو بھی نظر انداز کر دیا گیا، ان بازاروں میں بااثر افراد ، سرمایہ دار براجمان ہیں، شہر میں صرف مین بازار میں موجود ریڑھی بان، چھابڑی فروشوں اور اکا دکا دکانداروں کی دکانوں کے شٹر وغیرہ توڑے گئے اور انتظامیہ نے سب اچھاہے کہ رپورٹ ارباب اختیار کو بھجوا دی انتظامیہ نے اپنی کارکردگی دکھانے کے لئے عارضی بنیادوں پر تجاوزات کے خلاف اپریشن کیا جہاں دوبارہ مافیا نے مستقل بنیادوں پر ڈیرے ڈال لئے ہیں ، مگر اندرون شہرکے علاقے قصہ خوانی ،خیبر بازار ،اشرف روڈ ،مینا بازار ،کوچی بازار سمیت دیگر مصروف بازاروں میں تاحال تجاوزات قائم ہیں ، جن پر عرصہ دراز سے ناجائز قابضین نے پختہ تعمیرات کر رکھی ہیں اور کوئی پوچھنے والا نہیں ہے ، ستم ظریفی یہ ہے کہ ان سٹرکوں ، بازاروں میں شہریوں کا دن اور شام کے اوقات میں کافی رش رہتا ہے تجاوزات قائم ہونے کی وجہ سے شہریوں کو سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے تجاوزات قائم ہونے کے باعث معمر بزرگ شہریوں ، خواتین سمیت بچوں کا پیدل چلنا بھی محال ہو چکا ہے ، عوامی ، سماجی ، فلاحی تنظیموں نے شہر میں تجاوزات کے خلاف بلا امتیاز کاروائی کرنے کا مطالبہ کیا

مزید : پشاورصفحہ آخر