ناول نگار خالدہ حسین کی نمازجنازہ میں عزیزو اقارب اور ادیبوں کی شرکت

ناول نگار خالدہ حسین کی نمازجنازہ میں عزیزو اقارب اور ادیبوں کی شرکت

لاہور(فلم رپورٹر)نامور ناول نگار خالدہ حسین کی نماز جنازہ اسلام آباد میں ادا کی گئی جہاں خاندان کے افراد، قریبی عزیز اور ادیبوں نے شرکت کی۔خالدہ حسین کا شمار اپنے وقت کی کامیاب لکھاریوں اور اردو ادب کے بہترین ناول نگاروں میں کیا جاتا تھا۔انہوں نے 60 کی دہائی میں اپنے بہترین کام سے مقبولیت حاصل کی۔ان کا آخری ناول ’کاغذی گھاٹ‘ تھا۔افتخار عارف کا خالدہ حسین کے بارے میں کہنا تھا کہ ’انتظار حسین کے بعد خالدہ حسین ہمارے ملک کی بہترین فکشن لکھاری تھیں، وہ زندگی پر کہانیاں تحریر کرتی تھیں، خالدہ حسین کا انتقال اردو ادب کے لیے بڑا نقصان ہے، وہ ایک ایسی لکھاری تھیں جو خواتین کے سپورٹ میں بھی سرگرم رہیں۔خالدہ حسین کے افسانوں کے مجموعے جینے کی پابندی، میں یہاں ہوں، پہچان، دروازہ، مصروف عورت، خواب میں ہنوز ہیں۔انہیں صدارتی تمغہ برائے حسن کارگردگی بھی دیا گیا تھا۔

خالدہ حسین

مزید : صفحہ آخر