5ماہ کی حکومت سے 70سال کا حساب مانگا جا رہا ہے :زرتاج گل

5ماہ کی حکومت سے 70سال کا حساب مانگا جا رہا ہے :زرتاج گل

کراچی (اسٹاف رپورٹر)وزیر مملکت برائے ماحولیاتی تبدیلی زرتاج گل نے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی عوام کو روٹی ،کپڑا اور مکان دینے کا صرف دعویٰ کرتی رہی ہے ،ہماری حکومت نے سندھ سمیت ملک بھر میں پناہ گاہیں قائم کرکے ذوالفقار علی بھٹو کے نعرے کو عملی شکل دی ہے ۔ہمار ی پانچ ماہ کی حکومت سے ستر سال کا حساب مانگاجارہا ہے ۔ عوام کو جوابدہ ہیں لیکن ہم سے پانچ سال بعد جواب مانگا جائے ۔عمران خان کسی غریب کو بے گھر نہیں کرنا چاہتے ۔وزیراعظم نے واضح احکامات دیئے ہیں کہ جب تک سرکاری زمینوں پر رہائش پذیر غریب افراد کو متبادل رہائش فراہم نہ کردی جائے اس وقت تک انہیں وہاں سے بے دخل نہیں کیا جائے گا ۔سابق ناظم مصطفی کمال نے غلط منصوبہ بندی کی وجہ سے کراچی کے ماحول کو تباہ کردیا ۔ہم ماحول میں بہتری کے لیے سندھ حکومت کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے تیار ہیں ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ہفتہ کو کراچی پریس کلب میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا ۔زرتاج گل نے کہا کہ پوری دنیا کو اس وقت ماحولیاتی تبدیلی کا چیلنج درپیش ہے ۔ماضی میں پاکستان کی حکومت نے اس اہم مسئلے کی طرف توجہ نہیں دی ۔عمران خان پہلے سیاست دان تھے جنہوں نے اس مسئلے کی نزاکت کو سمجھا اور خیبرپختونخوا میں بلین ٹری منصوبے کا آغاز کیا ۔اب ملک بھر میں بلین ٹری منصوبے کے تحت درخت لگائے جارہے ہیں جس کے لیے مختلف کمیونی ٹیز اور ادارے حکومت کے ساتھ تعاون کررہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ کراچی میں بوہرہ کمیونٹی نے کراچی حیدرآباد موٹروے کے روٹ پر درخت لگانے کی پیشکش کی ہے اس کے ساتھ ہی سائٹ انڈسٹریل ایسوسی ایشن نے بھی لیاری ایکسپریس وے پر شجرکاری کرنے کی حامی بھر ی ہے ۔انہوں نے کہا کہ علماء کرام بھی حکومت کی اس مہم میں بھرپور حصہ لے رہے ہیں ۔معروف عالم دین مفتی نعیم نے وعدہ کیا ہے کہ وضو کے لیے استعمال کیے جانے والے پانی کو ہم محفوظ کرکے پلانٹیشن کے لیے استعمال کریں گے ۔زرتاج گل نے کہا کہ کراچی کے سابق ناظم مصطفی کمال نے اپنے دور نظامت میں ایسے درخت لگائے جو زمین کا پانی جذب کرلیتے تھے ،اس کی وجہ سے شہر میں پولر انرجی پھیلی اور شہریوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ۔ان کی غلط منصوبہ بندی کی وجہ سے کراچی میں ماحولیاتی تبدلی آئی اور کراچی کو آگے جاکر ہیٹ اسٹروک کا سامنا بھی کرنا پڑا ۔انہوں نے کہا کہ کرچی کا 12ہزار ٹن گندا پانی سمندر میں جارہا ہے جس کی وجہ سے ساحل سمندر کالا ہوگیا ہے ۔خراب آب و ہوا کی وجہ سے کراچی دنیا کے دس گندے ترین شہروں میں شمار ہوتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ ایک طویل ساحل سمندر ہونے کے باوجود سیاح یہاں کا رخ کرنے میں ہچکچاہٹ محسوس کرتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ماحولیاتی تبدیلی کے چیلنج سے نمٹنے کے لیے چیف سیکرٹری سندھ سمیت دیگر حکام سے بات چیت ہوئی ہے اور انہوں نے ہمیں بھرپور تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے ۔کراچی میں تجاوزات کے خلاف آپریشن کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں زرتاج گل نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے اس آپریشن کے حوالے سے نوٹس لیا ہے اور واضح ہدایات جاری کی ہیں سرکاری زمین پر رہائش پذیر افراد کو اس وقت تک وہاں سے منتقل نہ کیا جائے جب تک ان کی رہائش کے لیے متبادل کا انتظام نہ ہوجائے ۔انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی نے ہمیشہ روٹی ،کپڑا اور مکان کا نعرہ لگایا لیکن اس کو عملی جامہ تحریک انصاف کی حکومت پہنارہی ہے ۔کراچی سمیت ملک کے مختلف شہروں میں شیلٹر ہومز قائم کیے گئے ہیں جن میں غریب اور بے گھر افراد رہائش پذیر ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ہم عوام کو جواب دہ ہیں لیکن ہم سے 70سال کی غلطیوں کا حساب مانگا جارہا ہے جو کہ غلط ہے ۔ہم سے پانچ سال ہماری کاکردگی سے متعلق جواب طلب کیا جائے ۔ایک اور سوال کے جواب میں زرتاج گل نے کہا کہ پرانی اور نئی ایم کیو ایم میں بہت زیادہ فرق ہے ۔ایم کیو ایم پاکستان ہماری اتحاد ی جماعت ہے اور ملک کی بہتری کے لیے تحریک انصاف کے ساتھ تعاون کررہی ہے ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر