چار بڑی عالمی کمپنیوں کو سرمایہ کاری کیلئے جلد پاکستان لائیں گے: جاوید ملک

  چار بڑی عالمی کمپنیوں کو سرمایہ کاری کیلئے جلد پاکستان لائیں گے: جاوید ملک

  



اسلام آباد (کامرس ڈیسک) دبئی میں موجود دنیا کی چار بڑی کمپنیوں کو ویسٹ مینجمنٹ اور شمسی توانائی سمیت دیگر شعبوں میں سرمایہ کاری اور کاروبار کے مواقع تلاش کرنے کیلئے جلد پاکستان لایا جائے گا۔ ان خیالات کا اظہار دبئی، یو اے ای اور یو کے میں رجسٹر ڈپلومیٹک بزنس کلب کے صدر جاوید ملک نے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری میں تاجر برادری سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔چیمبر کے صدر محمد احمد وحید، سینئر نائب صدر طاہر عباسی، نائب صدر سیف الرحمٰن خان، سابق صدور زبیر احمد ملک، خالد اقبال ملک اور ظفر بختاوری سمیت خالد چوہدری، محبوب خان اور دیگر بھی اس موقع پر موجود تھے۔جاوید ملک نے کہا کہ دبئی میں دنیا کی 200سے زائد کمپنیاں کاروبار کر رہی ہیں اور بہت سی ملٹی نیشنل کمپنیوں کے ریجنل ہیڈکوارٹرز وہاں موجود ہیں لہذا پاکستان کی تاجر برادری کو چاہیے کہ متحدہ عرب امارات کے ہم منصبوں کے ساتھ مضبوط کاروباری روابط قائم کرنے کیلئے باقاعدگی کے ساتھ وہاں کا دورہ کریں جس سے نہ صرف یو اے ای ساتھ پاکستان کی تجارت و برآمدات کو بہتر فروغ ملے گا بلکہ پاکستان کو عالمی مارکیٹ میں بہتر رسائی فراہم ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی تاجر برادری کو دبئی میں اپنی موجودگی بڑھانے کی ضرورت ہے اور اس سلسلے میں اسلام آباد چیمبر آف کامرس اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی کمپنیوں کیلئے ہیلتھ کئیر شعبے سمیت دیگر شعبوں میں متحدہ عرب امارات میں کاروبار کے بے شمار مواقع موجود ہیں لہذا وہ ان سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کریں۔ انہوں نے یقین دہانی کرائی کہ یو اے ای کے ساتھ کاروباری روابط کو مزید بہتر کرنے کی کوششوں میں ڈپلومیٹک بزنس کلب چیمبر کے ساتھ ہر ممکن تعاون کرے گا۔ انہوں نے چیمبر کے صدر محمد احمد وحید کو ڈپلومیٹک بزنس کلب کی اعزازی ممبرشپ کا سرٹیفیکیٹ بھی پیش کیا۔ اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر محمد احمد وحید نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کے ساتھ کاروباری روابط کو مزید مضبوط کرنے اور تجارت و برآمدات کے نئے مواقع تلاش کرنے کیلئے چیمبر اپنا ایک وفد یو اے ای کے دورے پر لے جانے پر غور کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ ڈپلومیٹک بزنس کلب کے تعاون سے پاکستان کی متعدد مصنوعات یو اے ای اور وہاں سے دنیا کے مختلف ممالک کو برآمد کی جا سکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی تاجر برادری میں متحدہ عرب امارات کی مارکیٹ میں پائے جانے والے کاروباری مواقعوں کے بارے میں بہتر آگاہی نہ ہونے کی وجہ سے دونوں ممالک کی تجارت اصل صلاحیت سے کم ہے لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ اس گیپ کو کم کرنے کیلئے ڈپلومیٹک بزنس کلب اپنا کردار ادا کرے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سی پیک سمیت دیگر شعبوں میں غیر ملکی سرمایہ کاروں کیلئے پرکشش مواقع موجود ہیں لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ ڈپلو میٹک بزنس کلب متحدہ عرب امارات کے مزید سرمایہ کاروں کو پاکستان میں سرمایہ کاری اور جوائنٹ وینچرز کے مواقع تلاش کرنے پر آمادہ کرنے کی کوشش کرے۔ 

اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے سینئر نائب صدر طاہر عباسی، نائب صدر سیف الرحمٰن خان، زبیر احمد ملک، خالد اقبال ملک، ظفر بختاوری اور دیگر نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔

اور پاکستان و متحدہ عرب امارات کے درمیان تجارتی و اقتصادی تعلقات کو مزید مضبوط کرنے کیلئے مفید تجاویز پیش کیں۔ 

مزید : کامرس


loading...