مودی کی کولکتہ آمد، 3ہزار مظاہرین کا سڑکوں پر قبضہ، نعرے بازی

مودی کی کولکتہ آمد، 3ہزار مظاہرین کا سڑکوں پر قبضہ، نعرے بازی

  



کولکتہ(مانیٹرنگ ڈیسک،این این آئی) بھارت کے شہر کلکتہ میں وزیراعظم نریندر مودی کی آمد پر ہزاروں مظاہرین سڑکوں پر نکل آئے اور متعصب حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی جس پر وزیراعظم کو ایئرپورٹ سے گاڑی کے بجائے ہیلی کاپٹر کے ذریعے وزیراعلیٰ ممتا بینر جی کے گھر پہنچنا پڑا۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کو متنازعہ شہریت ترمیمی قانون کے حوالے سے شدید مزاحمت کا سامنا ہے اور ایسا ہی ریاست مغربی بنگال کے دورے پر بھی ہوا۔ ایئرپورٹ پر ہی 30 ہزار سے زائد مشتعل مظاہرین نے احتجاجی ریلی نکالی، ہاتھوں کی زنجیر بنائی اور متنازع شہریت ترمیمی قانون 2019 کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔ایئرپورٹ سے نکلنے والی ہر شاہراہ پر مظاہرین کے جمع ہونے پر وزیراعظم نریندر مودی مجبوراً ملٹری ہیلی کاپٹر میں مغربی بنگال کی وزیراعلیٰ اور متنازع شہریت قانون کی سخت ناقد ممتا بنرجی کے گھر پہنچے جہاں مظاہرین کی بھی بڑی تعداد پہنچنے میں کامیاب ہوگئی تاہم پولیس نے مظاہرین کو وزیراعلیٰ کے گھر جانے سے روک دیا۔مغربی بنگال کی وزیراعلیٰ ممتا بنر جی نے ملاقات کے دوران دوٹوک موقف اپناتے ہوئے وزیراعظم مودی سے شہریت ترمیمی قانون کو منسوخ کرنے کی تجویز دی تاہم وزیراعظم مودی نے مصروفیت کا بہانہ بناتے ہوئے متنازع قانون پر تبادلہ خیال کو اگلی میٹنگ تک موخر کردیا جس کے بعد وزیراعلیٰ بنرجی مظاہرین کے ساتھ احتجاج میں شامل ہوگئیں۔بھارت میں   لوگوں کے خلاف غداری کے مقدمات درج کئے جانے کے باوجود چنئی میں متنازعہ شہریت ترمیمی قانون کے خلاف ایک مظاہرے کے دوران ایک خاتون نے  ’فری کشمیر‘کا پوسٹر  ہاتھوں میں اٹھا لیا۔اس سے قبل نئی دہلی اور ممبئی میں احتجاجی مظاہروں کے دوران بھی اسی طرح کے پلے کارڈز دیکھے گئے تھے۔چنئی میں یہ پوسٹر نئی دہلی میں جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے طلباء  اور اساتذہ پر تشددکے خلاف احتجاج کرنے والی ایک خاتون نے اٹھایا ۔دریں اثنابھارتی  وزیر اعظم نریندر مودی نے  کہا ہے کہ شہریت کا ترمیمی بل ان اقلیتوں کے لیے ہے جن پر پاکستان میں مظالم ہوئے اور اب پاکستان کو جواب دینا ہو گا کہ گذشتہ 70 برسوں میں وہاں اقلیتوں پر ظلم کیوں کیا گیا۔  اپنے دورہ مغربی بنگال کے دوسرے دن طلبا ء سے خطاب کرتے ہوئے بھارتی  وزیر اعظم نے ایک مرتبہ پھر شہریت کے ترمیمی قانون (سی اے اے) پر بی جے پی حکومت کے موقف کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ قانون کسی کی شہریت ختم کرنے کے لیے نہیں بلکہ دینے کے لیے ہے۔ نریندر مودی کا کہنا تھا کہ ’اتنی وضاحت کے باوجود کچھ سیاسی وجوہات کی بنا پر سی اے اے کے بارے میں مسلسل ابہام پھیلایا جا رہا ہے۔  پاکستان میں جس طرح دوسرے مذاہب کے لوگوں پر تشدد کیا جاتا ہے اس پر آواز ہمارا نوجوان ہی اٹھا رہا ہے۔ اگر ہم شہریت کے قانون میں یہ ترمیم نہ کرتے تو نہ تو یہ متنازع ہوتا اور نہ ہی یہ معلوم ہوتا کہ پاکستان میں اقلیتوں پر کیسے مظالم ہوئے۔‘ انھوں نے کہا کہ اب پاکستان کو جواب دینا ہو گا کہ گذشتہ 70 برسوں میں اقلیتوں پر ظلم کیوں کیا گیا؟ ’مہاتما گاندھی نے جو کہا تھا ہم وہی کر رہے ہیں۔ ہم نے شمال مشرقی انڈیا کے لیے خصوصی انتظامات کیے ہیں تاکہ ان کی بنیاد متاثر نہ ہو۔‘ وزیر اعظم مودی کا مزید کہنا تھا کہ ’ہم نے یہ قانون راتوں رات نہیں بنایا ہے۔ یہ قانون شہریت چھیننے کے لیے نہیں بلکہ دینے کے لیے ہے۔  بنگلہ دیش کے وزیر خارجہ اور وزیر داخلہ اس سے قبل انڈیا کا دورہ منسوخ کر چکے ہیں۔ اس سے قبل بنگلہ دیش نے کہا تھا کہ ان کے یہاں اقلیتوں پر تشدد نہیں کیا گیا ہے۔ بنگلہ دیش کے وزیر خارجہ ڈاکٹر اے کے عبد المومن نے بنگلہ دیش میں اقلیتوں پر مظالم کے الزام پر کہا کہ ’بنگلہ دیش میں ہماری حکومت میں اقلیتوں پر کوئی جبر نہیں ہوا۔ ہاں، یہ سچ ہے کہ فوجی حکمرانی اور دیگر حکومتوں کے دور میں اقلیتوں پر چھوٹے پیمانے پر ظلم ہوا ہے۔ سنہ 2001 میں اقلیتوں کے ساتھ ہماری پارٹی کے کارکنوں پر بھی ظلم کیا گیا۔‘ وزیر خارجہ عبدالمومن نے یہ بھی کہا کہ انڈیا کی کچھ سیاسی جماعتیں اپنے مفادات کے لیے این آر سی میں بنگلہ دیش کا نام لے رہی ہیں۔بنگلہ دیش میں حزب اختلاف کی جماعت بی این پی بھی انڈیا میں این آر سی اور سی اے اے کا معاملہ اٹھا رہی ہے۔ بنگلہ دیش نیشنل پارٹی کے جنرل سکریٹری مرزا فخر الاسلام عالمگیر نے کہا ہے کہ انڈیا کی ریاست آسام میں نیشنل رجسٹر آف سٹیزن (بنگلہ دیش) کی آزادی اور خودمختاری کے لیے خطرہ ہے   ۔ وزیر اعظم  مودی نے کہا کہ بیلور مٹھ کسی زیارت گاہ سے کم نہیں ہے۔ آج سوامی ویویکانند کی یوم پیدائش ہے اور اس موقع پر انڈیا میں نوجوانوں کا دن منایا جا رہا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ سی اے اے پر کنفیوڑن پھیلائی جا رہی ہے اور صرف نوجوان اسے دور کر رہے ہیں۔ سی اے اے کے تعلق سے وزیر اعظم کے مغربی بنگال دورے کی مخالفت بھی ہوئی اور کولکتہ کے کئی مقامات پر لوگوں نے وزیر اعظم مودی کے دورے کی مخالفت کی۔ کولکتہ کے دھرم تللہ میں مظاہرین بڑی تعداد میں جمع ہوئے۔ زیادہ تر مظاہرین کا تعلق کانگریس اور بائیں بازو کی جماعتوں سے تھا۔ حکمراں جماعت ترنمول کانگریس کی طلبہ یونٹ بھی سی اے اے کے خلاف احتجاج کر رہی ہے۔  ہفتہ  کے روز جب وزیر اعظم مودی کولکتہ پہنچے تو انھوں نے وزیر اعلی ممتا بنرجی سے بھی رسمی ملاقات کی۔ اس ملاقات کے بعد ممتا بھی سی اے اے مخاللف مظاہرے میں شامل ہونے چلی گئیں۔ مغربی بنگال میں بہت سے لوگوں نے وزیر اعظم مودی اور سی ایم ممتا کی ملاقات کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔تاہم ممتا نے ملاقات کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ ’جب وزیر اعظم بنگال آئے تو یہ ایک اخلاقی ملاقات تھی۔ میں نے وزیر اعظم سے کہا ہے کہ بنگال کے عوام سی اے اے، این آر سی اور این پی آر کو قبول نہیں کریں گے۔ میں نے ان سے دوبارہ غور کرنے کے لیے کہا ہے۔

مودی کولکتہ 

مزید : صفحہ اول