دینی مدارس اسلام کے مضبوط قلعے ہیں‘ مولانا عبدالمستعان

دینی مدارس اسلام کے مضبوط قلعے ہیں‘ مولانا عبدالمستعان

  



سرائے نورنگ(نمائندہ پاکستان)نظم المدارس کے صوبائی صدرشیخ الحدیث مولاناعبدالمستعان نے علماء پرزوردیاکہ دینی مدارس کے ذریعے اسلامی تعلیمات سے نوجوان نسل کوروشناس کرایاجائے دینی مدارس وقت کی اہم ضرورت ہے علماء دینی مدارس میں درس وتدریس سے منسلک ہوجائیں‘ان خیالات کااظہاراُنہوں نے گذشتہ روزیہاں جامعہ المرکزی الااسلامی سردارآبادسرائے گمبیلامیں ضلع لکی مروت کے دینی مدارس کے منتظمین سے خطاب کرتے ہوئے کیااس موقع پرصوبائی نائب صدرمولاناحنیف اللہ،ڈپٹی جنرل سیکرٹری مولاناحسن خان،جماعت اسلامی تحصیل نورنگ کے امیرمولانااسعداللہ اورصوبائی شوریٰ کے رُکن حاجی عبدالصمدخان نے بھی خطاب کیاجہاں پراُنہوں نے مدارس میں طریقہ تدریس اور طلبہ کی تعداد اور دیگر انتظامی امور کے بارے میں معلومات حاصل کیں‘مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ علماء کوچاہئے کہ مدارس کے ذریعے اسلامی تعلیمات و احکامات عوام تک پہنچاکر حقیقی معنوں میں اسلامی شرعی نظام کے نفاذ میں کر دار ادا کر یں انہوں نے کہا کہ اگر اسلامی نظام کے نفاذ کے لئے صدق دل اور خلوص نیت کے ساتھ کام کیا جا ئے تو اسلامی نظام قائم ہوگاہمارا مقصد صرف بچوں کو نہیں بلکہ زندگی کے ہر شعبہ سے تعلق رکھنے والے افراد کو دینی تعلیمات سے روشناس کراناہے مزیدکہناتھا کہ پاکستان میں اسلامی نظام صرف اور صرف جماعت اسلامی پاکستان ہی لا سکتی ہے کیونکہ دوسری جماعتیں نہ تو جماعت اسلامی کی طرح منشور رکھتی ہے اور نہ ہی ان کے پاس جماعت کی طرح مخلص لیڈر شپ موجود ہے صوبائی صدر مولانا عبدالمستعان نے مصر میں اسلامی تحریک اخوان المسلمین کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اخوان المسلمین نے اپنی کارکردگی اور خلوص نیت کی وجہ سے مصر میں اکثریت میں تبدیل ہوگئی حالانکہ ان پر جو مظالم ہورہے ہیں وہ ساری دنیا کے سامنے ہیں ہم اپنے گریبانوں میں جھانک کر دیکھیں کہ ہمارے کام میں کتنا اخلاص ہے بحیثیت مسلمان ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ اللہ کی رضا کے لئے درس و تدریس کا عمل شروع کرے ہم سب نے جماعت اسلامی کے تحریک کے مزاج کے مطابق کام کرکے اپنے مشن کو آگے بڑھانا ہوگاہم نے اپنے علاقے میں علماء اور طلبہ کا خاص خیال رکھنا ہوگا کیونکہ یہ ہمارے انبیاء کے وارث ہیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر