ڈیرہ ریجن میں نیشنل ایکشن پلان پر بھرپور عملدرآمد کا حکم 

ڈیرہ ریجن میں نیشنل ایکشن پلان پر بھرپور عملدرآمد کا حکم 

  

ڈیرہ غازی خان (ڈسٹرکٹ بیورو رپورٹ) ریجنل پولیس آفیسر محمد فیصل رانا نے ریجن کے چاروں اضلاع ڈی جی خان،مظفر گڑھ،لیہ اور راجن پور کے پولیس افسران(بقیہ نمبر28صفحہ10پر)

 کو ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ نیشنل ایکشن پلان کی ایک ایک شق پر اس کی اصل روح کے مطابق عمل در آمد ضروری،ناگزیر اور واجب و فرض ہے،پوری قومی قیادت اور ریاستی اداروں نے مکمل اتفاق رائے سے نیشنل ایکشن پلان بنایا ہی اسی لئے تھا کہ پاکستان سے شر انگیزی اور نفرتوں کو جڑ سے اکھاڑ پھینکا جائے،نیشنل ایکشن پلان پر عمل در آمد کے مثبت اور اطمینان بخش نتائج سامنے آئے تاہم اگر پولیس نیشنل ایکشن پلان پر اس کی اصل روح کے مطابق عمل کروائے گی تو پاکستان کے قانون پسند معاشرے سے شر انگیزیاں اور نفرتیں ہمیشہ کے لئے ختم ہو جائیں گی،آر پی او نے کہا کہ نفرتیں اور شر انگیزیاں پھیلانے والے کے ساتھ ان کو کسی بھی حوالے سے سہولیات مہیا کرنے والوں کے ساتھ بھی قانون کے مطابق نمٹنا ہو گا،پولیس قانون نافذ کرنے والے دیگر اداروں سے قانون کے دائرے میں معلومات اور اطلاعات کا تبادلہ کر کے ایسی حکمت عملی وضع کرے کہ پورا ریجن نفرت اور شر انگیز نعروں کی وال چاکنگ سے پاک ہو جائے،معاشرے میں نفرتیں پھیلانے کا سبب بننے والا لٹریچر اور مٹیریل کا بھی قانون کی طاقت سے قانون کے مطابق خاتمہ کیا جائے،آر پی او نے کہا کہ شر پسند اور نفرتیں پھیلانے والوں کے خلاف  قانونی آپریشن کی کامیابی کے لئے قانون پسند طبقات کی راہنمائی اور پشتی بانی حاصل کی جائے،انہوں نے کہا کہ پولیس کالعدم تنظیموں اور فورتھ شیڈول میں شامل افراد کی قانون کے مطابق روزانہ کی بنیاد پر مانیٹرنگ جاری رکھے۔ ادھر ریجنل پولیس آفیسر ڈی آئی جی محمد فیصل رانا نے کہا ہے کہ پولیس لائن محکمہ کا بیس کیمپ اور پولیس والوں کا اصلی گھر ہے،اسے پولیس افسران اور اہلکاروں کی سہولیات سے مزین ہونا چاہیے ان خیالات کا اظہارر انہوں نے پولیس لائنز کی انسپکشن کرتے ہوئے کیا،آر پی او فیصل رانا نے کہا کہ پولیس ایک خاندان ہے،تھانوں میں تعینات افراد دوسرے شہروں میں اپنے فرائض ادا کرتے ہیں انہیں ان فرائض سے سبکدوشی کے بعداپنے اصلی گھر پولیس لائنز میں ہی آنا ہوتا ہے،جبکہ جو افسران اور اہلکار پولیس لائنز میں ہوتے ہیں وہ ایسی ریزور پلاٹون ہوتے ہیں جنہوں نے کسی بھی وقت کہیں بھی جا کر قانون شکنوں سے نمٹنا ہوتا ہے معاشرے میں امن قائم کرنا ہوتاہے،لہٰذا تھانوں میں تعینات افسران اور اہلکار ہوں یا پولیس لائنز میں تعینات افسران اور اہلکار،سب کا حقیقی اور اصلی گھر پولیس لائنز ہی ہے،انہوں نے کہا کہ میں نے ریجن کے چارون اضلاع میں واقع پولیس کے  اصلی گھرپولیس لائنز کو ان تمام سہولیات سے مزین کرنے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ پولیس لائنز بیس کیمپ کا درجہ ربھی کھتی ہیں کہ قانون کی حکمرانی قائم کرنے کے لئے یہاں پر پولیس کے ہر قسم کے ”اثاثے“ موجود ہوتے ہیں،آر پی او نے کہا کہ پولیس لائنز قانون شکنوں کے دلوں کا ایسا نشتر ہے جو انہیں ہر وقت چھبتا رہتا ہے لہٰذا پولیس لائنز کی فول پروف سیکورٹی بھی ناگزیر ہے جس کے لئے ڈی پی اوز کو روزانہ کی بنیاد پر سیکورٹی آڈٹ کرنا چاہیے،آر پی او نے پولیس لائنز کے مختلف حصے دیکھے،وہاں پر جن سہولیات کی کمی تھی ان کی فوری فراہمی کا حکم بھی دیا،آر پی او نے پولیس لائنز میں ہی اردل روم کا انعقاد کیاہے۔

ایکشن پلان

مزید :

ملتان صفحہ آخر -