لاہور ہائی کورٹ: بوسن گینگ سے تعلق رکھنے  والے ملزمان کی عمر قید کی سزا کیخلاف اپیلیں خارج 

لاہور ہائی کورٹ: بوسن گینگ سے تعلق رکھنے  والے ملزمان کی عمر قید کی سزا ...

  

 ملتان (خصوصی رپو رٹر)   لاہور ہائیکورٹ ملتان کے ججز مسٹر جسٹس (بقیہ نمبر31صفحہ10پر)

چوہدری مشتاق احمد اور مسٹر جسٹس فاروق حیدر پر مشتمل ڈویژن بینچ نے بوسن گینگ سے تعلق رکھنے والے خدا بخش عرف بخشی اور دیگر ملزمان کی عمر قید کی سزا کے خلاف اپیلیں خارج کر دی ہیں۔ ملزم کو انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت ڈیرہ غازی خان نے عمر۔قید کی سزا سنائی تھی۔مدعی کے وکیل رانا محبوب علی نے موقف اختیار کیا کہ ملزمان نے احمد علی نامی نوجوان کو اغوا کیا اور اس پر دو ماہ بیس دن تک تشدد کے بعد چھ لاکھ روپے تاوان لے کر رہا کیا گیا انہوں نے کہا کہ اس گینگ کے انیس افراد اغوا میں ملوث تھے جن میں سے پانچ پولیس مقابلے میں مارے گئے تین کی اپیلیں سپریم کورٹ سے خارج ہو چکی ہیں اس مقدمے کا ملزم چھ سال سے مفرور تھا ملزم کے وکیل جیمز جوزف نے دلائل دیے کہ خدا بخش عرف بخشی کا بوسن گینگ سے کوئی تعلق نہیں اسکے تین بھائیوں کو اسی گینگ کے لوگوں نے قتل کیا جس کے مقدمہ میں وہ گواہ تھا پٹشنر کا تعلق سیت پور ضلع مظفرگڑھ سے ہے جبکہ وقوعہ محمد پور دیوان ضلع راجن پور کا ہے اس کے علاہ پولیس کا یہ کہنا بھی غلط ہے کہ ملزم مفرور تھا چونکہ اسکے خلاف اشتہاری ہونے کی کاروائی نہیں ہوئی، اور اب وہ 2011 سے جیل میں قید ہے فاضل ڈویژن بینچ نے دونوں فریقین کے دلائل سننے کے بعد اپیل خارج کر دی ہے۔

اپیلیں خارج

مزید :

ملتان صفحہ آخر -