بداخلاقی مقدمہ کے ملزم مدثر عباس کی درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ

  بداخلاقی مقدمہ کے ملزم مدثر عباس کی درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس علی باقر نجفی نے بداخلاقی کے مقدمہ کے ملزم مدثرعباس کی درخواست ضمانت پرفیصلہ محفوظ کرلیا،دوران سماعت فاضل جج نے ملزم کے وکیل سے استفسار کیا کہ کیا لڑکی کا ڈی این اے ٹیسٹ ہوگیاہے؟جس پر درخواست گزار کے وکیل نے کہا کہ 7 روز بعد ڈی این اے نہیں ہوسکتا یہاں تومقدمہ ہی 3 ماہ بعد درج کروایاگیا تفتیشی افسر کی رپورٹ کی بابت عدالتی استفسار پرسرکاری وکیل نے بتایا کہ تفتیشی افسر کی رپورٹ میں مدثر عباس کوقصور وارقراردیا گیاہے اور میڈیکل ہوچکاہے،درخواست گزار کے وکیل نے کہا کہ 18 جولائی کو مقدمہ درج ہوا جبکہ ایف آئی آر میں وقوعہ کی حتمی تاریخ نہیں بتائی گئی،تین ماہ کی تاخیر سے لڑکی کا میڈیکل کروایا گیا،تین ماہ تک لڑکی نے کسی کو اپنے ساتھ ہونے والی بداخلاقی سے متعلق کسی کو بھی آگاہ نہیں کیا کوئی چشم دید گواہ بھی موجودنہیں،جھوٹے مقدمہ میں گزشتہ 5 ماہ سے زائدعرصہ سے ملزم قید ہے میں ہے ڈی این اے کیلئے کپڑے بھی نہیں دیئے اور میڈیکل بھی تین ماہ بعد کروایا مدثرعباس پر لگائے گئے تمام الزامات جھوٹ پرمبنی ہیں جس کی کوئی حقیقت نہیں،عدالت سے استدعاہے کہ جھوٹے مقدمہ کو خارج کرکے ملزم کی ضمانت منظور کی جائے۔

فیصلہ محفوظ 

مزید :

صفحہ آخر -