غیر قانونی معاملات میں ملوث 50سے زائد سیاسی رہنماؤں کے گرد گھیرا تنگ 

غیر قانونی معاملات میں ملوث 50سے زائد سیاسی رہنماؤں کے گرد گھیرا تنگ 

  

 لاہور(افضل افتخار) پنجاب میں اینٹی کرپشن کے متحرک کردار سے لینڈ مافیا، غیر قانونی ہاؤسنگ سوسائٹیز،سرکاری زمینوں پر پٹرول پمپس، کمرشل مارکیٹیں، شادی ہالز اور بس سٹینڈز سے کروڑوں کمانے والے سیاستدانوں کی نیندیں حرام ہو گئیں جبکہ مقدمات کے اندراج سے بہت سے اپنی ذمے داریوں مع غیر فعال اور بیورو کریسی میں اپنے ہمدرد ڈھونڈنے لگے روزنامہ پاکستان کو اس حوالے سے حاصل ہونے والی معلومات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی خصوصی ہدایات کے تحت پنجاب اور لاہور میں قبضہ مافیا کے خلاف ایکشن کے اعلان کے بعد اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ نے پنجاب میں مختلف غیر قانونی معاملات میں ملوث 50سے زائد جن سیاسی رہنماؤں کے گرد گھیرا تنگ کیا ہے اب یہ سیاستدان حکومتی ایوانوں اور بیورو کریسی میں اپنے ”ہمدردوں“ کی تلاش میں ہیں جبکہ ملک میں پی ڈی ایم کی جاری تحریک میں مسلم لیگ (ن) کو لاہور جلسے کی ناکامی ہے جس خفت کا سامنا کرنا پڑا میں یہ تمام امور بھی شامل ہیں کیونکہ ماضی میں حکومتی پارٹی کے یہ زیادہ تر سیاسی لوگ سرکاری زمینوں پر قبضوں کے علاوہ ایسے بہت سے معاملات سے اپنی جیبیں بھرتے رہے جن سے قومی خزانے کو 3424 ملین روپے کا نقصان اٹھانا پڑا اینٹی کرپشن نے جن سیاسی لوگوں کے خلاف گھیرا تنگ کیا ہے ان میں مسلم لیگ ن کے بہت سے رہنما سکرین سے آؤٹ اور پارٹی صفوں میں پیچھے پیچھے نظر آتے ہیں محسن شاہ نواز رانجھا، جاوید لطیف، دانیال عزیز، سیف الملوک کھوکھر سمیت بڑے نام خواجہ آصف کی نیب کے ہاتھوں گرفتاری کے بعد مزید ڈر گئے ہیں حالانکہ ایف آئی آر کے اندراج کے بعد ابھی اینٹی کرپشن نے تحقیقات شروع کی ہیں بہت سوں نے قبل از گرفتاری ضمانتیں بھی کرا رکھی ہیں محکمہ کے معتبر ذرائع نے بتایا ہے کہ دانیال عزیز 24 سوکنال سرکاری اراضی (سرگودھا) خرم دستگیر کے گوجرانوالہ میں پٹرول پمپس جبکہ سیف الملوک کھوکھر پر 226کنال اراضی پر قبضے ملتان کی ایک بزرگ سیاسی شخصیت پر درجنوں ایکڑ سرکاری اراضی ہتھیانے کے الزامات ہیں اینٹی کرپشن حکام کے مطابق سرکاری املاک اور زمینوں پر قبضوں اور سرکاری خزانے کو نقصان پہنچانے کے الزامات کے تحت درج مقدمات کی تحقیقات میں بڑے بڑے انکشاف سامنے آ رہے ہیں تاہم محکمہ اینٹی کرپشن بغیر کسی دباؤ کے معاملات آگے بڑھاتے ہوئے کارروائی جاری رکھے گا۔

محکمہ اینٹی کرپشن 

مزید :

صفحہ اول -