ریلوے کے محصولات میں اضافے کیلئے میرین گروپ کی پیش کش 

ریلوے کے محصولات میں اضافے کیلئے میرین گروپ کی پیش کش 

  

 کراچی(اسٹاف رپورٹر)میرین گروپ آف کمپنیز کی جانب سے ریلوے کے وفاقی وزیر اعظم خان سواتی کو ان کے حالیہ دورے کے دوران مال بردار ٹرینوں کے کاروبار کا مجوزہ منصوبہ پیش کیا گیا۔ گروپ کے چیئرمین عاصم اے صدیقی نے  وفاقی وزیر کو خوش آمدید کہا جبکہ پاکستان انٹر نیشنل بلک ٹرمینل(PIBT)کے چیف ایگزیکیٹو، آفیسر  شارق اے صدیقی اور پاکستان انٹر موڈل لمیٹڈ (PIL) کے چیف آپریٹنگ آفیسر جاوید صدیقی نے  پریزنٹیشن پیش کی جس میں نجی شعبہ کی مدد سے اٹھائے جانے والے اقدامات کے بارے میں بریف کیا گیا، جس میں بتایا گیا کہ پاکستان ریلوے کو اضافی محصولات کے لئے خاطر خواہ آمدنی حاصل کرنے میں کیسے مدد مل سکتی ہے۔ شارق صدیقی نے اپنی پریزنٹیشن میں اس بات پر توجہ مرکوز کی کہ کس طرح جمعہ گوٹھ جنکشن سے  PIBT کو ملانے کے لئے 6کلو میٹر کا ٹریک بچھانے سے نا صرف نمایاں طور پر پاکستان ریلوے کی آمدنی میں اضافہ ہو گا بلکہ اس مخصوص ٹریک سے ماحولیاتی مسائل کو کم سے کم کرنے اور کوئلے کی نقل و حمل میں لاگت کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔  وید صدیقی نے اپنی پریزنٹیشن میں روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ پاکستان ریلوے، نجی سیکٹر کی مدد سے فریٹ ویگنوں کے انجنوں کے موجودہ سیٹ اپ کو استعمال کر کے ریلوے کے ذریعہ اور بغیر کسی اضافی سرمایہ کاری کے فائدہ اٹھا سکتا ہے۔ اس موقع پر ایم این اے محمد نجیب ہارون اور نثار احمد میمن چیف ایگزیکیٹو پاکستان ریلوے بھی ہمراہ تھے اعظم خان سواتی نے پریزینٹیشن اور پیش کئے گئے پلانز کو بہت سراہا جس میں پاکستان ریلوے کے لئے اضافی محصولات پیدا کرنے کے لئے منصوبے پیش کئے گئے۔انہوں نے میرین گروپ مینیجمنٹ کے ساتھ وسیع پیمانے پر اس معلوماتی سیشن پر خوشی کا اظہار کیا اور پاکستان ریلوے کے بہترین مفاد میں فوری طور پر اور روایت سے ہٹ کر فریٹ ٹرینیز بزنس سولوشن کے لئے نجی شعبہ کے ساتھ آگے بڑھنے کے عزم کا یقین دلایا۔میرین گروپ آف کمپینز پاکستان میں سب سے بڑا اور متنوع کارگو ہینڈلنگ اور لاجسٹک گروپ ہے۔میرین گروپ کے بنیادی منصوبے کے طور پر پاکستان انٹر نیشنل بلک ٹرمینیل کو پورٹ قاسم میں 305ملین امریکی ڈالر کی لاگت سے ملک کا پہلا کوئلہ، کلینکر اور سیمنٹ ٹرمینل کے طور پر قائم کیا گیا ہے جس میں جدید ترین، مکمل میکانائزڈ سہولت موجود ہے جو پورٹ قاسم پر ڈرٹی بلک کارگو کو سنبھالتا ہے۔یہ ٹرمینل پورے ملک میں کوئلے کی فراہمی کے وسیع سلسلے کا لازمی جزو بن گیا ہے۔ 

مزید :

صفحہ آخر -