ریسٹورنٹ کے کھانے نے چینی رقاصاؤں کو نوکری سے محروم کردیا، بے یارومددگار کردیا

ریسٹورنٹ کے کھانے نے چینی رقاصاؤں کو نوکری سے محروم کردیا، بے یارومددگار ...
ریسٹورنٹ کے کھانے نے چینی رقاصاؤں کو نوکری سے محروم کردیا، بے یارومددگار کردیا

  

بیجنگ (نیوز ڈیسک) چین کے صوبے شانشی (Shanxi) میں ایک ریسٹورنٹ کی جانب سے چلائی جانے والی پروموشن نے باسکٹ بال میچ کے دوران رقص کرکے کھلاڑیوں کے حوصلے بڑھانے والی Cheer Leaders کو ان کی نوکریوں سے محروم کردیا ہے۔ مقامی میڈیا میں شائع ہونے والی خبروں کے مطابق چینی سوشل میڈیا صارفین پر بھوت سوار ہے کہ وہ ہاتھ کو کمر کے پیچھے سے اپنی ناف تک پہنچانے کی کوشش کرتے ہیں اور اس عمل کی تصویر اپ لوڈ کرتے ہیں۔ اگر ہاتھ ناف تک پہنچ جائے تو اس کا مطلب یہ کہ جسم فٹ ہے اور اضافی چربی موجود نہیں۔ ایک ریسٹورنٹ نے اس رجحان سے فائدہ اٹھاتے ہوئے بہت ساری چیئرلیڈرز کو اپنے ریسٹورنٹ پر بلانا شروع کردیا اور ان سے درخواست کی جاتی کہ ایسا پوز بنا کر اسے ایک منٹ تک قائم رکھیں۔ لچکدار بدن والی ان نوجوان لڑکیوں کیلئے یہ ذرا بھی مشکل بات نہ تھی اور ’تائی یوآن‘ میں قائم یہ ریسٹورنٹ اس سروس کے بدلے انہیں مفت کھانے کھلانے لگ گیا، اس کے بعد کچھا یسا ہوا کہ کوئی تصور بھی نہ کرسکتا تھا۔

مزید پڑھیں:ریسٹورنٹ میں ڈسکاؤنٹ حاصل کرنے کیلئے انتہائی شرمناک شرط

چینی میڈیا میں شائع ہونے والی خبروں کے مطابق چیئرلیڈرز کا یہ گروہ اپنا زیادہ وقت اس ریسٹورنٹ پر گزارنے لگا نتیجہ یہ نکلا کہ زیادہ کھانے کے باعث چند ہی دن میں میچ کے دوران رقص کیلئے پہنے  جانے والے کپڑے انہیں تنگ ہونے لگے یہاں تک کہ ان کی کوچ کو پتہ چل گیا معاملہ کچھ گڑ بڑ ہے۔ بس پھر جس جس لڑکی کی نیکر تنگ ہوئی اسے نوکری سے فارغ کردیا گیا۔ یوں مفت کھانے کا لالچ ان رقاصاؤں کی نوکریاں لے گیا۔ تاہم چائنہ ڈیلی کے مطابق کوچ کا کہنا ہے کہ اگر یہ لڑکیاں اپنے کپڑوں میں دوبارہ فٹ آجائیں تو انہیں موقع دیا جاسکتا ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس