حماس سرکاری ملازمین کے حقوق کی حمایت سے دست کش نہیں ہوگی، ڈاکٹر موسیٰ ابو مرزوق

حماس سرکاری ملازمین کے حقوق کی حمایت سے دست کش نہیں ہوگی، ڈاکٹر موسیٰ ابو ...

دوحہ (این این آئی) حماس کے سیاسی شعبے کے نائب صدر ڈاکٹر موسیٰ ابو مرزوق نے کہا ہے کہ ان کی جماعت غزہ کی پٹی کے سرکاری ملازمین کے حقوق کی حمایت سے دست کش نہیں ہوگی۔ خطے اور فلسطین کے اندرونی حالات میں تبدیلی سے حماس ملازمین کی حمایت پرمبنی پالیسی پرکوئی فرق نہیں پڑتا۔حماس رہنماء نے ایک بیان میں کہا کہ غزہ کی پٹی کے سرکاری ملازمین کے حقوق سلب کرنے کے ذمہ دار فلسطینی اتھارٹی کے سربراہ محمود عباس ہیں۔انہوں نے غزہ کے ملازمین کی تنخواہوں کی ادائی کے معاملے میں مسلسل پس و پیش سے کام لیا جس کے نتیجے میں غزہ کے ہزاروں خاندانوں کوبدترین مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ابو مرزوق نے کہا کہ غزہ کی پٹی میں 2006 ء کے انتخابات میں حماس کی انتخابی فتح کے بعد غزہ کے دو ملین لوگوں پر کئی اقسام کی جنگیں مسلط کی گئیں۔ کچھ جنگیں اسرائیلی دشمن کی جانب سے مسلط کی گئی اور کچھ جنگیں فلسطینی اتھارٹی کی جانب سے مسلط کی گئی تھیں۔ اسرائیل نے جنگیں مسلط کرنے کیساتھ غزہ کی پٹی کا چاروں اطراف سے محاصرہ بھی کیا۔ دوسری جانب فلسطینی اتھارٹی کی جانب سے غزہ کے سرکاری ملازمین کے واجبات روک کر ایک غیراخلاقی جنگ کا ارتکاب کیا گیا۔حماس رہنماء نے استفسار کیا کہ فلسطینی اتھارٹی کی وزارت برائے لیبر کس کام کی وزارت ہے اور اس عہدے پر فائز وزیرکس مقصد کیلئے ہے۔ کیا وہ صرف ایک مخصوص گروپ کے گھر بیٹھے تنخواہیں دینے کیلئے مقرر کیا گیا ہے اور دوسری جانب اپنی ذمہ داریاں انجام دینے والے سرکاری ملازمین کو ان کی اجرت سے محروم کرنے کیلئے مقرر کیا گیا ہے۔ دراصل فلسطینی اتھارٹی کے سربراہ محمود عباس اس ساری صورتحال کے ذمہ دار ہیں۔

مزید : عالمی منظر