سٹرس گریننگ ترشاوہ پھلوں کیلئے خطرناک بیکٹیریائی بیماری ہے:ماہرین

سٹرس گریننگ ترشاوہ پھلوں کیلئے خطرناک بیکٹیریائی بیماری ہے:ماہرین

لاہور( کامرس رپورٹر)ترشاوہ باغات کے ماہرین نے بتایا ہے کہ سٹرس گریننگ ترشاوہ

 پھلوں مثلاََمالٹے اور سنگتر ے پر زیادہ شدت سے حملہ آور ہونے والی خطرناک بیکٹیریائی بیماری ہے ۔یہ بیماری مون سون بارشوں کے دوران زیادہ تیزی سے پھیلتی ہے اور اس سے متاثرہ پودوں کی ٹہنیاں پیلاہٹ کا شکار ہو جاتی ہیں۔بیماری کی شدت میں ٹہنیاں ، شاخیں تیزی سے سوکھنے لگتی ہیں اور درخت پر پتوں کی تعداد میں شدید کمی وقوع پذیر ہو جاتی ہے اور پورا پوداسوکھ جاتا ہے ۔ پھل کا سائز چھوٹا رہتا ہے اور وقت سے پہلے کیرے کا شکار ہو جاتا ہے ۔سٹرس گریننگ رس چوسنے والے کیڑوں سٹرس سلا کے ذریعے بھی پھیلتی ہے ۔ سٹر س سلانئی پھوٹ پر حملہ آور ہوتا ہے لہٰذا باغبانوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ باغات کو سٹرس سلا کے حملہ سے محفوظ بنائیں۔مزید برآں جیسمین اور بارہ ماسی جیسے آرائشی پودے بھی سٹرس گریننگ کے لیے میزبان پودوں کا کردار ادا کرتے ہیں۔

اس بیماری کو کنٹرول کرنے کے لیے نرسری کا بیماری سے پاک ہونا ضروری ہے ۔باغبانوں کے لیے لازم ہے کہ جونہی اس بیماری کی علامات نظر آئیں تو وہ متاثرہ شاخوں کو کاٹ کر جلا دیں اور دوسرے میزبان پودوں کو بھی تلف کریں۔شاخ تراشی اور نرسری کی پیوند کاری کے لیے استعمال ہونے والے اوزاروں کو صاف اور جراثیم سے پاک رکھیں۔ اس مقصد کے لیے مناسب جراثیم کش محلول ڈیٹول یا بلیچ بحساب 10ملی لٹر فی لٹر پانی کے حساب سے استعمال کریں۔

مزید : کامرس


loading...