دنیا کیلئے بڑا خطرہ! یہ چیز آگ بگولہ بن کر آج دنیا میں کسی بھی جگہ آسمان سے گرسکتی ہے! چینی سائنسدانوں نے وارننگ جاری کر دی

دنیا کیلئے بڑا خطرہ! یہ چیز آگ بگولہ بن کر آج دنیا میں کسی بھی جگہ آسمان سے ...
دنیا کیلئے بڑا خطرہ! یہ چیز آگ بگولہ بن کر آج دنیا میں کسی بھی جگہ آسمان سے گرسکتی ہے! چینی سائنسدانوں نے وارننگ جاری کر دی

  


لندن (نیوز ڈیسک) اس خبر نے دنیا میں تشویش کی لہردوڑادی ہے کہ چین کا پہلا خلائی سٹیشن ممکنہ طور پر بے قابوہوکر زمین کی جانب بڑھ رہا ہے اور کسی بھی وقت شعلوں میں لپٹا یہ سیٹلائٹ زمین کے ساتھ ٹکرا سکتا ہے۔

اخبار دی انڈیپنڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق چین کا پہلا خلائی سٹیشن تیان گانگ -ون 2011ءمیں خلاءمیں چھوڑا گیا اور اسے کنٹرولڈ طریقے سے زمین پر آنا تھا یا سمندر میں اترنا تھا لیکن اس پر نظر رکھنے والوں کا کہنا ہے کہ یہ اب اپنی مرضی کا مالک ہوچکا ہے اور چین اس پر اپنا کنٹرول کھورہا ہے، جس کے نتیجے میں یہ کسی بھی وقت زمین سے ٹکراسکتا ہے۔ رپورٹ کے مطابق یہ خیال بھی ظاہر کیا جارہا ہے کہ یہ سیٹلائٹ زمین تک پہنچنے سے پہلے ہی جل سکتا ہے، جس کے نتیجے میں یہ پگھلی ہوئی دھات کی صورت میں زمین پر آن گرے گا۔ اس بات کے امکانات موجود ہیں کہ چینی سیٹلائٹ یا اس کی پگھلی ہوئی دھات سمندر یا کسی ویران علاقے میں گرے، لیکن یہ کسی گنجان آباد علاقے کا رخ بھی کرسکتا ہے۔

ایٹم بم کے دھماکے میں زندہ کس طرح بچاجاسکتا ہے؟ بے حد سادہ اور انتہائی ضروری معلومات

رپورٹ کے مطابق چین نے یہ سیٹلائٹ ایک خلائی سٹیشن کے ابتدائی قدم کے طور پر خلاءمیں پہنچایا تھا، جس کا مقصد بالآخر انٹرنیشنل خلائی مرکز کے مقابلے پر ایک نیا سپیس سٹیشن قائم کرنا تھا۔ خلائی سائنسدان تھامس ڈورمن نے ویب سائٹ Space.com سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کے خیال میں چین اپنے سیٹلائٹ کا کنٹرول کھوچکا ہے لیکن یہ آخری وقت تک انتظار کرے گا اور بالکل آخری لمحے پر دنیا کو بتائے گا کہ اس کے سیٹلائٹ کے ساتھ کچھ گڑبڑہوگئی ہے۔

واضح رہے کہ چینی میڈیا میں کئی ماہ قبل یہ خبریں آئی تھیں کہ سائنسدانوں کو سیٹلائٹ کے ساتھ رابطے میں مشکلات پیش آرہی تھیں مگر پچھلے کئی ماہ سے سیٹلائٹ کی صورتحال کے متعلق چینی حکام کی جانب سے کوئی واضح بات سامنے نہیں آئی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...