چین کی ملی جلی ملکیت کی اصلاحات کا اطلاق مقامی زیر انتظام ایس او ایز پر ہو گا

چین کی ملی جلی ملکیت کی اصلاحات کا اطلاق مقامی زیر انتظام ایس او ایز پر ہو گا

بیجنگ (آئی این پی ) ایک مقامی زیر انتظام سرکاری ملکیت کمپنیوں (ایس او یز ) سال رواں کے باقی عرصے میں ملی جلی ملکیت اصلاحات کے ساتھ تجربہ کرنے کی اجازت ہو گی ، اس کی اطلاع چین کی سرکاری خبررساں ایجنسی کے زیر اہتمام شائع ہونیوالے جریدہ اکنامک انفارمیشن ڈیلی نے بدھ کو دی ہے، تقریباً 20مرکزی ایس او ایز کے دوگروپوں نے ملی جلی ملکیت اصلاحات سکیم مرتب کی ہے اور بجلی ، تیل ، قدرتی گیس ، ریلوے ، شہری ہوابازی ، مواصلاحات اورڈیفنس کی صنعتوں میں پیشرفت کی ہے،کمپنیوں کا نیا گروپ زیادہ تر دفاع ، تیل و گیس کی صنعتوں کو احاطہ کرے گا۔

رپورٹ میں قومی ترقی و اصلاحات کمیشن کے ایک اہلکار کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ ان اصلاحات سے سٹرٹیجک سرمایہ کار متعارف ہوں گے ، کارپوریٹ ایکوٹی سٹرکچر بہتر ہو گا ،ڈائریکٹروں کے بورڈ کے قیام میں ا ضافہ ہو گا اور پارٹی اور کارپوریٹ گورننس کی قیادت کو ضم کرنے کے بہتر طریقے تلاش کئے جائیں گے، ملی جلی ملکیت کی اصلاحات نجی یا غیرملکی سرمایہ کاری کے اجرا کے ساتھ ایس او ایز کی شیئر ہولڈنگ سٹرکچر کو متنوع بنانے کے ساتھ کی جاتی ہے، بعض ایس او ایز کے ملازمین کو ترغیبات کے طورپر سٹاکس کی پیشکش کی جاتی ہے، اچھی کارکردگی والی ایس او ایز کو سرکاری ملکیت کیپیٹل انویسٹمنٹ کمپنیوں کی طرف سے سرمایہ کاری بھی فراہم کی جاتی ہے، چین میں 102مرکزی ایس او ایز ہیں جو ملک کے سرکاری اثاثوں کے وافر حصے کو مینج کرتی ہیں تا ہم کئی شعبوں میں ان کی اجارہ داری نے چھوٹے مارکیٹ اداروں کو ختم کردیا ہے اور کم استعداد اور ناقص سروس کا باعث بنی ہے، ملی جلی ملکیت اصلاحات مرکزی ایس او ایز کی استعداد کو بہتر بنانے کے لئے انتہائی نمایاں ذرائع ثابت ہوئی ہیں ۔

مزید : کامرس


loading...