پی سی ایم اے کی 11رکن کمپنیوں کے عالمی کونسل کے تشکیل کردہ حفاظتی چارٹر دستخط

پی سی ایم اے کی 11رکن کمپنیوں کے عالمی کونسل کے تشکیل کردہ حفاظتی چارٹر دستخط

  

لاہور(کامرس رپورٹر)پاکستان کیمیکل مینوفیکچررز ایسوسی ایشن ( پی سی ایم اے) کی کوششوں سے 11 بڑی ممبر کمپنیوں نے کیمکل ایسوسی ایشنوں کی عالمی کونسل ( آئی سی سی اے) کے تشکیل کردہ حفاظتی چارٹر پر دستخط کر دیئے ہیں جبکہ متعدد دیگر ممبران اس مقصد کیلئے اپنے پیداواری اور ترسیلاتی انفراسٹرکچر میں ضروری تبدیلیوں میں مصروف ہیں۔ یہ بات پی سی ایم اے کے وائس چیئرمین ابرار احمد نے یہاں کیمیکل انڈسٹری سے متعلقہ بین الاقوامی حفاظتی پروگرام ’’ریسپونسبل کیئر‘‘ کی دو روزہ ورکشاپ کی اختتامی نشست سے خطاب کر تے ہوئی کہی۔ اختتامی نشست سے ایسوسی ایشن ک سیکرٹری جنرل اقبال قدوائی ، مجلس قائمہ برائے ریسپونسبل کیئر پروگرام کے چیئرمین پرویز صوفی اور کیمیکل انڈسٹری کے بین الاقوامی ایکسپرٹ اور پی سی ایم اے کے چیف کنسلٹنٹ طاہر جے قادر نے خطاب کیا۔پی سی ایم اے کے وائس چیئرمین نے بتا یاکہ پاکستان، کیمیکل ایسوسی ایشنوں کی بین الاقوامی کونسل کا ممبر نہ ہونے کی وجہ سے کیمیکل کی عالمی منڈی میں موجود کاروباری مواقع سے صحیح طور پر استفادہ نہیں کر پا رہا تھا۔ لیکن دو سال قبل کیمیکل مینؤفیچررز ایسوسی ایشن کے معرض وجود میں آنے کے ساتھ ہی متذکرہ ممرشپ حاصل کرنے کی کو شش شروع کر دی گئی۔ انہوں نے کہا کہ اس ممبر شپ کی بنیادی شرط کیمیکل کی پیداوار ان کی ترسیل کے نظام کو عالمی معیاروں کے مطابق محفوظ بنانا تھا۔ انہون نے بتا یا کہ پی سی ایم اے نے ان معیاروں کے بارے میں آگاہی اور عملدرآمد کے عمل کو اس قدر سبک رفتاری سے ممکن بنایا کہ انٹرنیشنل کونسل آف کیمیکل ایسوسی ایشنزنے پاکستان کو عبور ی طور اپنا ممبر منتخب کر لیا ہے ۔ اس موقع پر خطاب کر تے ہوئے ایسوسی ایشن کے سیکرٹری جنرل اقبال قدوائی نے کہا اگرچہ کیمکلز کی محفو ظ پیدوار اور ترسیل پی سی ایم اے کے ترجیحی ایجنڈے میں شامل ہے۔ لیکن پاکستان میں کیمیکل مواد کی وجہ سے رونما ہونے والے حادثات اور اس کے مضر جان استعمال کی وجہ سے حفاظتی پروگرام پر عملدراآمد کو ہنگامی بنیادوں پر مکمل کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ اور اس مقصد کیلئے آئی سی سی اے کے چارٹر کو عام کرنے کیلئے دو ورکشاپ منعقد کی جاچکی ہیں ۔ جبکہ چار مزید ورکشاپ کا انعقاد بھی اسی برس کے دوران ہی کیا جائے گا۔

مزید :

کامرس -