جے آئی ٹی رپورٹ کے بعد وزیر اعظم کو مستعفی ہو جانا چاہئے ، اپوزیشن رہنما

جے آئی ٹی رپورٹ کے بعد وزیر اعظم کو مستعفی ہو جانا چاہئے ، اپوزیشن رہنما

  

لاہور( شہزاد ملک ) سپریم کورٹ میں جے آئی ٹی کی رپورٹ جمع ہونے کے بعد وزیر اعظم میاں نوازشریف کو اخلاقی طور مستعفی ہو جانا چاہئے کیونکہ وزیراعظم اور ان کے خاندان کی چوری پکڑی گئی ہے وزیر اعظم کا کیس سپریم کورٹ میں آخری مرحلے میں ہے اس لئے انہیں استعفیٰ دے دینا چاہئے ۔ ان خیالات کا اظہار اپوزیشن کی مختلف جماعتوں کے راہنماؤں نے ’’ پاکستان‘‘ سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے تحریک انصاف کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات و رکن قومی اسمبلی شفقت محمود نے کہا کہ وزیر اعظم نواز شریف اور ان کے خاندان کی چوری او ررفراڈ پکڑا گیا ہے جمہوریت چونکہ اخلاقیات کا ہی دوسرا نام ہے اس لئے وزیر اعظم کو اخلاقی طور وزارت عظمیٰ پر رہنے کا کوئی حق نہیں رہا وہ فوری طور پر مستعفی ہو جائیں ۔ پیپلزپارٹی ورکرز کی رہنماء ناہید خان نے کہا کہ جب پاناما لیکس میں وزیر اعظم اور ان کے خاندان کانام آیا تھا تو اسی وقت ہی نواز شریف کو مستعفی ہو جانا چاہئے تھا اب انہیں گرفتاری سے بچنے کے لئے فوری طور پر مستعفی ہو کر سپریم کورٹ میں جا کر اپنا کیس لڑنا چاہئے اور اپنی جگہ کسی اور وزیر اعظم بنا دیں تاکہ جمہوریت چلتی رہے اور اسمبلیاں تحلیل نہیں ہونی چاہئے ۔ پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنماء نوید چودھری نے کہاکہ نواز شریف نے قوم سے خطاب میں وعدہ کیا تھا کو اگر کمیشن نے ان پر کوئی الزام لگایا تو وہ گھر چلے جائیں گے جے آئی ٹی نے ان پر الزامات کی بچھاڑ کر دی ہے اس لئے اب وزیر اعظم مستعفی ہو کر گھر جائیں اگر وہ سپریم کورٹ سے کلیئر ہو گئے تو واپس آجائیں ورنہ وہ نااہل ہوگئے تو واپسی بھی ناممکن ہو جائے گی اور اگر انہوں نے استعفیٰ نہ دیا تو ان کی تو ساکھ خراب ہو چکی ہے اب ملک کی ساکھ کو بھی خطرہ لاحق ہو جائے گا۔

مزید :

صفحہ آخر -