ماتحت عدالتوں میں بارش سے بجلی کی آنکھ مچولی ، وکلاء اور سائل پریشان

ماتحت عدالتوں میں بارش سے بجلی کی آنکھ مچولی ، وکلاء اور سائل پریشان

لاہور(نامہ نگار)صوبائی دارالحکومت میں بارش کے باعث ماتحت عدالتوں میں وقفے وقفے سے بجلی بند ہونے سے عدالتی کام تعطل کا شکار رہا،سائلین کو بھی تاریخیں دے کرواپس بھجوا دیا گیا، متعدد عدالتوں میں عملہ موبائل کی روشنی میں کام نمٹاتا رہاجبکہ زیادہ تر وکلاء بھی اپنے چیمبروں تک محدود رہے ۔اس کے ساتھ ساتھ جگہ جگہ پانی کھڑا ہونا معمول بن گیا ہے جس کے باعث سائلین اور وکلاء کو گزرنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز ہونے والی بارش کے باعث سیشن کورٹ ،ماڈل ٹاؤن ،ضلع کچہری ،کینٹ کچہری سمیت دیگر ماتحت عدالتوں میں عدالتوں کے باہرپانی کھڑا ہوگیاجس کی وجہ سے پیشی کے لئے آنے والے سائلین اور جیلوں سے لائے گئے ملزمان کو بھی شدیدپریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔بارش کے باعث ماتحت عدالتوں میں وقفے وقفے سے بجلی کی آنکھ مچولی سے عدالتیں تاریکی میں ڈوبی رہیں اورعدالتی کام رک گیاجبکہ جو سائلین عدالتوں تک پہنچ سکے وہ بھی بجلی کے آنے کا انتظار کرتے رہے۔ متعدد کیسوں میں سائلین کو اگلی تاریخیں دے دی گئیں۔اس حوالے سے عدالتوں میں آنے والے شہری نعمان، محمد ناصر ،اصغر علی ، نیامت اور جمیل بھٹی نے نمائندہ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکام بالا کو چاہیے کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ کے دوران انہیں متبادل انتظامات کریں ،انہوں نے مزید کہا کہ دوردراز سے آنے والے افراد کو اسی وجہ سے اگلی سماعت کی تاریخیں دے دی گئی ہیں جس سے سائلین شدید مشکلات سے دوچار ہوئے ہیں ،اس حوالے سے وکلاء مدثر چودھری، مرزا حسیب اسامہ ، ارشاد گجر اورمجتبی چودھری کا کہنا ہے کہ کوئی شبہ نہیں کہ بجلی بند ہونے کے بعدعدالتی عملہ ،وکلاء و دیگر سٹاف کو اکثر اوقات شدید مشکلات کا سامنا کرناپڑتا ہے جبکہ نکاسی آب کا صحیح نہ ہونے کی وجہ سے معمولی سی بارش کے سبب بھی جگہ جگہ پانی کھڑا ہوجانا معمول بن چکا ہے ۔

Back

مزید : میٹروپولیٹن 1