مستونگ دھماکے میں 128افراد شہید ،اس حملے کی ذمہ داری کس نے قبول کی ؟جان کر پاکستانیوں کی تشویش میں بھی اضافہ ہو جائے گا

مستونگ دھماکے میں 128افراد شہید ،اس حملے کی ذمہ داری کس نے قبول کی ؟جان کر ...
 مستونگ دھماکے میں 128افراد شہید ،اس حملے کی ذمہ داری کس نے قبول کی ؟جان کر پاکستانیوں کی تشویش میں بھی اضافہ ہو جائے گا

  

کوئٹہ(ڈیلی پاکستان آن لائن)بلوچستان کے ضلع مستونگ  میں  پی بی 35 سے بلوچستان عوامی پارٹی کے امیدوار اور ممتاز محب وطن بلوچی سردارسراج رئیسانی کے انتخابی جلسہ میں ہونے والے خوفناک خود کش حملے کی ذمہ داری کالعدم دہشت گرد تنظیم دولت اسلامیہ(داعش) نے قبول کر لی ہے ۔

برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق بلوچستان کے ضلع مستونگ میں حال ہی میں بننے والی سیاسی جماعت بلوچستان عوامی پارٹی کے امیدوار نوابزادہ سراج رئیسانی کی کارنر میٹنگ میں ہونے والے خود کش حملے کی ذمہ داری کالعدم دہشت گرد تنظیم دولت اسلامیہ نے قبول کر لی ہے ،دولتِ اسلامیہ کی نیوز ایجنسی عماق کے مطابق مستونگ میں ہونے والے اس حملے میں خودکش جیکٹ کے ذریعے دھماکہ کیا گیا۔مستونگ میں ہونے والے اس بدترین خود کش حملے میں اب تک کی اطلاعات کے مطابق کم از کم 128 افراد شہید اور 150 سے زیادہ زخمی ہو گئے ہیں جبکہ کئی زخمیوں کی حالت انتہائی تشویش ناک بتائی جا رہی ہے جس کی وجہ سے جاں بحق ہونے والے افراد کی تعداد مزید بڑھنے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہے ۔ بم ڈسپوزل سکواڈ کا کہنا ہے کہ یہ خود کش حملہ تھا جس میں آٹھ سے دس کلوگرام بال بیئرنگ استعمال کیے گئے جس کی وجہ سے زیادہ جانی نقصان ہوا ۔واضح رہے کہ اسی حلقے میں سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان سردار اسلم رئیسانی اپنے بھائی کے مخالف آزاد حیثیت میں لڑ رہے تھے، سراج رئیسانی کو اسلم رئیسانی کے وزارت اعلیٰ کے دور میں بھی حملے کا نشانہ بنایا گیا تھا جس میں وہ خود بچ گئے تھے البتہ ان کا بیٹا جاں بحق ہو گیا تھا،سراج رئیسانی کو حکومت سے قریب سمجھا جاتا تھا۔

مزید : قومی