سندھ اینگر وکول مائننگ کمپنی کوئلے کی پیداور 7.6ملین ٹن تک بڑھائے گی

  سندھ اینگر وکول مائننگ کمپنی کوئلے کی پیداور 7.6ملین ٹن تک بڑھائے گی

  

اسلام آباد (اے پی پی) سندھ کی صوبائی حکومت اور اینگرو کے اشتراک سے قائم کی جانے والی سندھ کول مائننگ کمپنی " (ایس ای سی ایم سی) آئندہ سال تک تھر سے کوئلے کی کان کنی 7.6 ملین ٹن سالانہ تک بڑھائے گی، اس طرح کوئلے کی پیداوار میں دو گنا اضافہ ہو جائے گا، کوئلے کی پیداوار میں اضافہ سے کوئلے کی مدد سے پیدا کی جانے والی بجلی کی پیداوار بھی 660 میگاواٹ تک بڑھنے کی توقع ہے۔ سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر فضل رضوی نے کہا ہے کہ کمپنی تھر لاک II کی کان سے آئندہ سال تک کوئلے کی پیداوار 7.6 ملین ٹن سالانہ تک بڑھائے گی جبکہ قبل ازیں کان سے فیز I کے دوران 3.8 ملین ٹن کوئلہ نکالا جا رہا ہے۔ انہوں ے کہا کہ اس حوالے سے کمپنی نے مالیاتی ضروریات مکمل کر لی ہیں اور کوءئلے کی پیداوار میں دو گنا اضافہ کے تمام انتظامات کو حتمی شکل دے دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کوئلے کی پیداوار میں اضافہ سے تھر بلاک II سے بجلی کی پیداوار 1320 میگاواٹ تک بڑھ جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ کمپنی نے جون 2018ء میں کوئلے کی پہلی تہ تک رسائی حاصل کی تھی اور گزشتہ سال جولائی میں کوئلے کی باقاعدہ کان کنی شروع کر دی تھی جس کی سالانہ پیداوار 3.8 ملین ٹن سالانہ ہے۔ اینگرو پاور تھر لمیٹڈ (ای پی ٹی ایل) 2014ء میں قائم کی گئی تھی اور تھر میں دو پاور پراجیکٹ سے 330 میگاواٹ بجلی کوئلے کی مدد سے پیدا کرنے کا کام شروع کیا گیا تھا۔ ای ٹی پی ایل اینگرو پاور جن، چائنہ مشینری انجینئرنگ کارپوریشن، حبیب بینک اور لبرٹی ملز کی شراکت داری سے شروع کی گئی تھی تاکہ تھر میں مقامی کوئلے کی مدد سے سستی بجلی پیدا کر کے قومی گرڈ مین شامل کی جائے۔

مزید :

کامرس -