وہ ایرانی شہری جنہوں نے اپنے رہبر اعلیٰ 'شرمندہ' کردیا

وہ ایرانی شہری جنہوں نے اپنے رہبر اعلیٰ 'شرمندہ' کردیا
وہ ایرانی شہری جنہوں نے اپنے رہبر اعلیٰ 'شرمندہ' کردیا

  

تہران(ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا کے کئی دیگر ممالک کی طرح ایران میں بھی کورونا کی وبا کا پھیلاو مسلسل جاری ہے۔احتیاطی تدابیر پر عمل کرنے کی وجہ سے ایران بھی ان ممالک میں شامل ہے جہاں وبا پر قابو نہیں پایا جاسکا۔

وبا کے مسلسل پھیلاؤ کے باوجود لوگوں کی جانب سے احتیاط نہ کرنے والے ایرانی شہریوں پر ایران کے رہبراعلیٰ سید آیت اللہ علی خامنہ ای نے تنقید کی ہے۔ بی بی سی کے مطابق انہوں نے کہا ہے کہ وہ ان افراد کے رویے پر ’شرمندہ‘ ہیں  جو ’ماسک پہننے جیسا معمولی کام نہیں کر سکتے۔

ان کا یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب انھوں نے تمام شہریوں سے وائرس کا پھیلاؤ روکنے کے حوالے سے حکومت کی مدد کریں۔

ایران میں کورونا وائرس کیسز ایک مرتبہ پھر بڑھنا شروع ہو گئے ہیں۔ اتوار کے روز ملک میں 194 افراد ہلاک ہوئے جبکہ مزید 2186 مریض بھی سامنے آئے۔

خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق آیت اللہ علی  خامنہ ای نے وائرس کے پھیلاؤ میں اس اضافے کو ’مایوس کن‘ قرار دیا۔

جانز ہاپکنز یونیورسٹی کی جانب سے جاری اعداد و شمار کے مطابق اب تک ایران میں کورونا وائرس کے باعث 12600 سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

خیال رہے ایران میں گزشتہ روز صدر حسن روحانی کی جانب سے ایک بار پھر پابندیوں کا اعلان کیاگیاہے۔ نئے احکامات کے بعد ملک بھرمیں شادی بیاہ اور دیگر تقریبات کے علاوہ کسی بھی قسم کے اجتماع پر تاحکم ثانی پابندی عائد کی گئی ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -کورونا وائرس -