چینی بحران ایک تسلیم شدہ حقیقت ،عدالت نہیں ، حکومت عوام کو اپنے اقدامات پر جواب دہ ہے ،اسلام آبادہائیکورٹ کا تفصیلی فیصلہ جاری

چینی بحران ایک تسلیم شدہ حقیقت ،عدالت نہیں ، حکومت عوام کو اپنے اقدامات پر ...
چینی بحران ایک تسلیم شدہ حقیقت ،عدالت نہیں ، حکومت عوام کو اپنے اقدامات پر جواب دہ ہے ،اسلام آبادہائیکورٹ کا تفصیلی فیصلہ جاری

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)اسلام آبادہائیکورٹ نے 35 صفحات پر مشتمل چینی رپورٹ کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا جس میں شوگر ملز مالکان کی درخواست مسترد کرنے کی وجوہات بھی بتائی گئی ہیں۔ 

عدالت نے قرار دیا ہے کہ  چینی بحران ایک تسلیم شدہ حقیقت ہے جس سے انکار ممکن نہیں،شوگرملز کابنیادی نقطہ شہرت کونقصان پہنچائے جانے کا ہے ، شوگر انکوائری کمیشن نے جرأت کے ساتھ ایک شفاف رپورٹ پیش کی  اور  ایک صوبے کے موجودہ چیف ایگزیکٹو سے متعلق بھی بات کی،  شوگر انکوائری کے معاملے پر حکومت کوکارروائی کی آزادی دینے کی ضرورت ہے ،ہم بطور جج بنیادی ضروریات فراہم نہ ہونے پر عوام کو جوابدہ نہیں، آئین کے مطابق حکومت اپنے اقدامات پرعوام کوجوابدہ ہے۔

فیصلے میں مزید کہاگیاہے کہ عدالت ایگزیکٹو کے اختیارات میں مداخلت نہیں کرتی تاہم درخواست گزارکے بنیادی آئینی حقوق متاثرہوں توعدالت مداخلت کرسکتی ہے۔عدالت نے مزید کہا کہ  حکومت کوعوامی پریشانی دورکرنے کیلئے اقدامات کی اجازت دی جاتی ہے،اگر عدالت مداخلت  کرتی ہے تو عوام کی پریشانی دورکرنے کے اقدامات میں تاخیرہوگی۔

یادرہے کہ انکوائری کمیشن کی رپورٹ کے بعد شوگر ملز مالکان نے تحقیقاتی اداروں کو کارروائی سے روکنے کے لیے عدالت سے استدعا کی تھی ۔  اسلام آباد ہائی کورٹ نے شوگر ملز ایسوسی ایشن کی چینی انکوائری رپورٹ پر کارروائی روکنے کی درخواست مسترد کرتے ہوئے اس حوالے سے حکم امتناع بھی خارج کر دیا تھا ، عدالت نے اپنے حکم نامے میں تمام اداروں کو چینی انکوائری رپورٹ پر کارروائی کی اجازت بھی دے دی تھی۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -