اوباما انتظامیہ کاعراقی شہروں پر قبضہ کرنے والے عسکریت پسندوں کے خلاف فضائی حملوں پر غور

اوباما انتظامیہ کاعراقی شہروں پر قبضہ کرنے والے عسکریت پسندوں کے خلاف فضائی ...

واشنگٹن (اے پی پی) اوباما انتظامیہ نے عراقی شہروں موصل اور تکریت پر قبضہ کرنے والے عسکریت پسندوں کے خلاف فضائی حملوں پر غور شروع کردیا ہے جبکہ اقوام متحدہ نے موصل پر عسکریت پسندوں کے کنٹرول سنبھالنے کی مذمت کرتے ہوئے سلامتی کونسل کا اجلاس طلب کرلیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق اوباما انتظامیہ عراق میں دہشت گردوں کے خلاف کارروائی کےلئے بغداد کو ڈرون حملوں سمیت ہر ممکن فوجی تعاون فراہم کرنے پر غور کررہی ہے۔ امریکی محکمہ دفاع کے اہلکار کے میڈیا کو بتایا کہ بغداد انتظامیہ نے عسکریت پسندوں کے خلاف کارروائیوں میں تعاون کےلئے صدر باراک اوباما کی انتظامیہ سے رابطہ کیا ہے تاہم اس کےلئے باضابطہ طور پر کوئی درخواست موصول نہیں ہوئی۔

 دفاعی اہلکار کا کہنا تھا کہ موصل پر آئی ایس آئی ایل کے قبضہ کے بعد عراقی فوج کو مزید ہتھیار فراہم کرنے پر بھی غورکیا جارہا ہے تاہم امریکی فجویں کو دوبارہ عراق بھیجنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔ دوسری جانب وائس ہاﺅس کے ترجمان جے کارنی نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ آئی ایس آئی ایل کے خلاف لڑنے کےلئے قومی اتحاد ضروری ہے اور امریکا عراق کی سیاسی قیادت کا بھرپور ساتھ دےگا۔ دریں اثناءامریکی تنظیم کے مطابق اسلامک سٹیٹ آف عراق اینڈ دی لیونٹ کے ترجمان ابومحمد العدنانی نے شمال اور شمال وسطی عراق پر قبضہ کرنے کے بعد بغداد اور کربلا کی طرف پیش قدمی کرنے کی دھمکی دی ہے۔

مزید : عالمی منظر