چیف جسٹس کی سربراہی میں جوڈیشل کمیشن کا اجلاس،4ججوں کو مستقل،2کو سبکدوش کرنے کی سفارش

چیف جسٹس کی سربراہی میں جوڈیشل کمیشن کا اجلاس،4ججوں کو مستقل،2کو سبکدوش کرنے ...
چیف جسٹس کی سربراہی میں جوڈیشل کمیشن کا اجلاس،4ججوں کو مستقل،2کو سبکدوش کرنے کی سفارش

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(نامہ نگار)جوڈیشل کمیشن آف پاکستان نے سندھ ہائیکورٹ کے 4 ایڈیشنل ججوں کو مستقل کرنے کی سفارش کر دی جبکہ کارکردگی سے مطمئن نہ ہونے پر 2 ایڈیشنل ججوں کو سبکدوش کر دیا۔جوڈیشل کمیشن آف پاکستان کا اجلاس چیف جسٹس پاکستان مسٹر جسٹس تصدق حسین جیلانی کی سربراہی میں سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں منعقد ہوا، اجلاس میں سپریم کورٹ کے مسٹر جسٹس جسٹس ناصر الملک، مسٹر جسٹس جسٹس میاں ثاقب نثار، مسٹر جسٹس جسٹس انور ظہیر جمالی، سندھ ہائیکورٹ کے چیف جسٹس مسٹر جسٹس مقبول باقر، پاکستان بار کونسل کے ممبر یٰسین آزاد اور وزیر قانون سندھ ڈاکٹر سکندر میندرو نے شرکت کی، ذرائع کے مطابق اجلاس میں سندھ ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اور پاکستان بار کونسل کے ممبر نے سندھ ہائیکورٹ میں سال 2012میں تعینات ہونے والے 6 ایڈیشنل ججوں کو مستقل کرنے سفارش کی تاہم جوڈیشل کمیشن کے ایک دوسرے رکن نے کمیشن کو بتایا کہ دو ایڈیشنل جج صاحبان فاروق علی چنا اور ریاضت علی سحر کی کارکردگی قابل اطمینان نہیں ہے، جوڈیشل کمیشن نے متفقہ طور پر 4ایڈیشنل ججوں جسٹس فاروق شاہ، جسٹس صلاح الدین پنہوڑ، جسٹس عزیز الرحمن اور جسٹس آفتاب احمد کو مستقل کرنے کی سفارش کر دی، یہ سفارشات منظوری کیلئے اب پارلیمانی کمیٹی کو بھجوائی جائینگی، جوڈیشل کمیشن نے قابل اطمینان کارکردگی نہ ہونے پر دو ایڈیشنل ججز جسٹس فاروق علی چنا اور جسٹس ریاضت علی سحر کو مستقل کرنے سے معذرت کر لی جس کے بعد دونوں جج صاحبان کو ان کے عہدوں سے سبکدوش کر دیا گیاہے۔

مزید : لاہور