وزیراعظم ہو تا تو فوج کو اسلام آباد ائیر پورٹ بلوانے والوں کو جیل میں ڈال دیتا ، محمود خان ا چکزئی

وزیراعظم ہو تا تو فوج کو اسلام آباد ائیر پورٹ بلوانے والوں کو جیل میں ڈال ...

                                                            اسلام آباد (سٹاف رپورٹر،آئی این پی) پختونخواہ ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود خان اچکزئی نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ میں سچ مستقبل کو محفوظ بنانے کے لئے بولتے ہیں، اسٹیبلشمنٹ جمہوریت کو نہ چھیڑے تو عزت کریں گے، نواز شریف کی جگہ وزیر اعظم ہوتا تو ایئرپورٹ پر فوج کو بلوانے والے کو جیل میں ڈال دیتا، ملک میں دونوں شریف ہیں، دنیا کو پیغام دیں کہ جمہوریت کےلئے دونوں ایک ہیں، جمہوریت پر سمجھوتہ نہیں کر سکتے، جمہوریت کے حامیوں اور مخالفوں میں لکیر کھینچنی ہو گی، آئین کو پھاڑنے والے کو الٹا لٹکانا ہو گا، پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف مل کر جمہوریت کو پٹڑی سے اترنے سے بچانے کے لئے کردار ادا کریں۔ جمعرات کو قومی اسمبلی اجلاس میں بجٹ پر جاری بحث کے دوران اظہار خیال کرتے ہوئے محمود خان اچکزئی نے کہا کہ ملک میں جمہوریت خطرے میں ہے اس لیے وزیر اعظم نواز شریف اور آرمی چیف کو اپنے اختلافات ختم کرنے چاہئیں، پاکستان صرف اسی صورت میں بچ سکتا ہے جب دونوں ”شریف“ ایک پیج پر ہوں۔ حکومت کو جمہوریت کو محفوظ بنانے کی غرض سے تمام سیاسی قوتوں پر مشتمل کل جماعتی کانفرنس بلانی چاہئیے اور غیر سیاسی قوتوں کا مقابلہ کرنے کیلئے ایک جمہوری اتحاد کی ضرورت ہے جو جمہوری نظام کے خلاف ساشیں کر رہی ہیں۔محمود اچکزئی نے کہا کہ حکومت پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ کو اسلام آباد پہنچنے پر گرفتار کر لے جو حکومت اور جمہوریت کیخلاف سازشوں میں مصروف ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ کو آئندہ کی تاریخ کے لئے سچ بولتے ہیں ہمیں کہا جاتا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کے خلاف بوتے ہیں جس طرح دنیا کی ایجنسیاں جمہوریت سے چھیڑ خانی نہیں کرتیں یہ بھی نہ کریں تو عزت کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ ذاتی حیثیت میں کوئی مفاد ثابت ہو جائے تو سیاست سے کنارہ کشی اختیار کر لوں گا، ہم نے ساری زندگی جمہوریت کی بقاءپر خرچ کر دی، جمہوریت ایک طاقت ہے جس کی وجہ سے ڈکٹیٹروں کے بچے اور پوتے بھی پارلیمنٹ میں بیٹھے ہیں اگر میں وزیر اعظم نواز شریف کی جگہ ہوتا تو ایئرپورٹ پر فوج کو بلوانے والے کو جیل میں ڈال دیتا ، ملک میں دو شریف ہیں ایک نواز شریف اور ایک راحیل شریف، دونوں شریف دنیا کو بتائیں کہ جمہوریت کی مضبوطی کے لئے وہ ایک ہیں، افغانستان کو آزاد ملک قرار دینا ہے، عداللہ عبداللہع۴بداللہ عبداللہ عبداللہ اور کرزئی کو پاکستان لائیں گے تو وہ پاکستان کے خلاف نہیں جائیں گے، اگر ایسا نہیں کرتے تو ملک کو بربادی کی طرف لے جائیں گے، ہمیں یہ کہنا ہو گا کہ فاٹا ہمارا ہے، فاٹا میں گڑ بڑ ہو رہی ہے، عمران خان خیبرپختونخواہ میں اچھی کارکردگی دکھائیں، وفاقی حکومت کو ہم راضی کرلیں گے۔ انہوں نے کہا کہ گورنر شپ بلوچستان پر میرا حق ہے اور کارکردگی کی بنیاد پر بنایا گیا ہے، ان پر کرپشن کا کوئی الزام نہیں ہے۔ محمود خان اچکزئی نے کہا کہ میں نے مدینہ اور لندن جا کر میاں نواز شریف سے ملاقاتیں کیں اور انہیں محترمہ بے نظیر بھٹو کے ساتھ اتحاد بنانے کے لئے راضی کیا۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف مل کر جمہوریت کو ڈی ریل ہونے سے بچائیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ مسلمان نہیں ہو سکتا جو عبادت گاہوں پر حملے کرے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا کو بتانا ہو گا کہ پاکستان کی امداد جمہوریت سے مشروط کریں۔ فوج کو سلام اور جو جمہوریت کو پسند نہیں کرتا وہ مردہ باد ، آئین کو پھاڑنے والے کو الٹا لٹکانا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ جمہوریت پر سمجھوتہ نہیں ہو سکتا۔ جمہوریت کے حامیوں اور مخالفوں کے درمیان لکیر کھینچنی ہو گی۔

 محمود اچکزئی

مزید : صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...