پنجاب حکومت کا پرائمری سکولوں میں سمر کیمپ لگانے کا فیصلہ واپس لینے سے انکار

پنجاب حکومت کا پرائمری سکولوں میں سمر کیمپ لگانے کا فیصلہ واپس لینے سے انکار

لاہور(نامہ نگار)پنجاب حکومت نے گرمیوں کی چھٹیوں میں پرائمری سکولوں میں سمر کیمپ لگانے کا فیصلہ واپس لینے سے انکار کر دیا، سیکرٹری سکولز ایجوکیشن کے بیان کے بعد لاہور ہائیکورٹ نے حکومت اور اساتذہ کے وکیل کو حتمی دلائل کیلئے طلب کر لیا لاہورہائیکورٹ کے جسٹس علی باقر نجفی نے کیس کی سماعت شروع کی توعدالت کے روبرو درخواست گزار نصر اللہ سمیت 4 اساتذہ کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ حکومت نے گرمیوں کی چھٹیوں میں میں سکولوں میں پانچویں جماعت سے لیکر دسویں جماعت کے طلبہ کیلئے سمر کیمپ لگانے کا نوٹیفکیشن جاری کیا ہے، شدید گرمی میں سمر کیمپ کا انعقاد بچوں کے لیے جان لیوا بھی ثابت ہوسکتا ہے، وکیل نے بتایا کہ ننکانہ میں ایک طالب علم گرمی کے باعث جاں بحق ہوا ہے لہذا عدالت سمر کیمپ لگانے کا اقدام کالعدم قرار دے کیونکہ پنجاب کے پچاس فیصد پرائمری سکولوں میں بجلی اور ٹھنڈے پانی کی سہولت دستیاب نہیں ہے، سیکرٹری سکولز عبدالجبار شاہین نے عدالت میں پیش ہو کر بتایا کہ سمر کیمپ لگانے کا فیصلہ 2012میں کیا گیا تھا تاکہ بچوں کے تعلیمی معیار میں مزید اضافہ کیا جا سکے، انہوں نے بتایا کہ فی الحال یہ نوٹیفکیشن واپس نہیں لے رہی، عدالت نے سیکرٹری کا بیان ریکارڈ کرنے کے بعد درخواست کی سماعت ایک ہفتے تک ملتوی کرتے ہوئے پنجاب حکومت اور اساتذہ کے وکلا کو حتمی بحث کیلئے طلب کرلیا۔

 انکار

مزید : صفحہ آخر