زبردستی ’آئی لویو‘ کہنے پر ہرجانے کا دعویٰ

زبردستی ’آئی لویو‘ کہنے پر ہرجانے کا دعویٰ
 زبردستی ’آئی لویو‘ کہنے پر ہرجانے کا دعویٰ
لاس اینجلس (نیوز ڈیسک) ایک امریکی کمپنی کے ملازمین نے کمپنی کے خلاف اس بناءپر مقدمہ کردیا ہے کہ انہیں ملازمت کے دوران مالکان نے عبادت کرنے، خدا کا شکر ادا کرنے، روحانی باتیں کرنے اور ایک دوسرے کو ”آئی لو یو“ کہنے کا حکم دیا تھا۔ خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق یونائیٹڈ ہیلتھ پروگرامز آف امریکہ نامی کمپنی نے ملازمین کو کام کے دوران مذہبی سرگرمیاں اختیار کرنے کا حکم دیا تھا جن میں خدا کا شکر اور ایک دوسرے سے محبت کے اظہار کیلئے ”آئی لیو یو“ کہنا بھی شامل تھا۔ کچھ ملازمین نے اس حکم کو اپنی مذہبی آزادی میں مداخلت قرار دے کر اس کے خلاف مزاحمت کی تو انہیں ٹرانسفر، معطلی یا ملازمت سے نکالنے جیسی سزائیں دی گئیں۔ اب ان متاثرہ ملازمین نے کمپنی نے خلاف مقدمہ دائر کردیا ہے تاکہ انہیں ہرجانہ اور پچھلی تنخواہیں ادا کی جائیں۔ ان ملازمین کا کہنا ہے کہ انہیں ”انین ہیڈ“ نامی ایک عقیدہ اختیار کرنے پر مجبور کیا جارہا تھا جو کہ کمپنی کے مالک کی خالہ کا تیار کردہ ایک روحانی عقائد کا نظام ہے۔ ملازمین نے توقع ظاہر کی ہے کہ کمپنی کو مذہبی ڈکٹیٹر شپ کی سزا ضرور ملے گی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...