لالچی بیٹی نے باپ کی قبر اکھاڑ دی

لالچی بیٹی نے باپ کی قبر اکھاڑ دی
لالچی بیٹی نے باپ کی قبر اکھاڑ دی

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

شکاگو (نیوز ڈیسک) مادہ پرستی جدید مغربی تہذیب کا تعارف بن چکی ہے اور حرص و ہوس اس درجہ کو پہنچ گئی ہے کہ بچے مردہ والدین کی ہڈیوں سے بھی دولت نچوڑنے کی کوشش کررہے ہیں۔ امریکی شہر نیو ہمیشائر کے ارب پتی بزنس مین ایڈورڈ نیش کی بدقسمتی دیکھئے کہ اس کی موت کے بعد اس کی بیٹی نے ہی اس کی قبر کھود ڈالی کیونکہ اسے شک تھا کہ قبر میں نیش کی اصل وصیت ہوگی جو اس کیلئے فائدہ مند ثابت ہوسکتی ہے۔ نیش استعمال شدہ مشینری کا ایک بڑا تاجر تھا اور 2004ءمیں ہارٹ اٹیک سے اس کی موت ہوگئی۔ اس کی بیٹی میلنی لنچ کو شروع سے شک تھا کہ اس کے باپ کی منظر عام پر آنے والی وصیت اصل نہیں اور باپ کی موت کے 10 سال بعد اصل وصیت کی تلاش میں باپ کی قبر کھود ڈالی اور اس کی باقیات کی بے حرمتی کی۔ میلنی نے یہ شرمناک حرکت اپنے ساتھیوں جینٹ اور مائیکل کو ساتھ ملا کر کی۔ پولیس نے بتایا کہ ایڈورڈ کی قبر کے سیمنٹ کے بلاک ٹوٹے ہوئے تھے اور اس کا تابوت بھی کھلا ہوا تھا۔ اس بدبخت بیٹی کو باپ کی مردہ ہڈیوں کی بے حرکتی کرکے اس کی وصیت تو نہ مل سکی البتہ اس کے اپنے بیان کے مطابق اس کے باپ کے ڈھانچے کے ہاتھ میں ایک سگریٹ کی ڈبی کے علاوہ کچھ نہ تھا۔

مزید : جرم و انصاف