ریاض اور مکہ مکرمہ میں موبائل کی 17دکانوں کو سر بمہر کر دیا گیا

ریاض اور مکہ مکرمہ میں موبائل کی 17دکانوں کو سر بمہر کر دیا گیا

جدہ (این این آئی) ریاض اور مکہ مکرمہ میں موبائل کی 17دکانوں کو سر بمہر کر دیاگیاجبکہ دکانیں بند کرنے والوں کو پانچ دن کی مہلت دے دی گئی ۔ غیر ملکی موبائل کا کاروبار کرنے والے کسی دوسرے کاروبار میں منتقل ہو سکتے ہیں۔ عرب ٹی وی کے مطابق سعودی عرب میں موبائل مارکیٹوں پر چھاپوں کا سلسلہ جاری ہے، ریاض میں 100اور مکہ مکرمہ میں 17دکانیں سربمہر کر دیں۔سعودی عرب میں موبائل کی دکانیں بند کرنے والے مالکان کو انتباہ دیا ہے کہ 5دن کے اندر اندر کاروبار شروع کریں یا مارکیٹ سے آوٹ ہو جائیں۔

سعودی نائب وزیر محنت نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ موبائل مارکیٹ سعودائیزیشن کا فیصلہ ریاستی اختیار کے تحت کیا گیا ہے۔جو غیر ملکی کارکن موبائل کا کاروبار کر رہے ہیں وہ ریٹیل کا کوئی کاروبار کر سکتے ہیں ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ قانون کے مطابق کوئی بھی کاروبار کرنے والا اپنا کاروبار تبدیل کر سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں پورا اعتراف ہے کہ غیر ملکی کارکنوں نے سعودی معیشت کی بہتری میں بڑا کردار ادا کیا ہے۔ وزارت محنت ان کارکنان کے حقوق کا پورا پورا تحفظ کرے گی تاہم موبائل کے شعبے میں وہ کام نہیں کر سکتے ۔ سعودی عرب کی لیبر مارکیٹ میں طلب موجود ہے ۔ اسی لیے مسلسل لیبر ویزے جاری ہو رہے ہیں۔ بہتر ہو گا کہ سعودی سرمایہ کار باہر سے کارکن لانے کی بجائے اپنے شہریوں کی خدمات حاصل کریں۔ سعودی عرب میں ان دکانوں کے مالکان کو انتباہ کیا گیا ہے کہ جو موبائل فروخت اور مرمت کی دکانیں بند کئے ہوئے ہیں اگر انہوں نے 5دن کے اندر دکانیں نہ کھولیں تو ان کو قانون کے مطابق سزائیں دی جائیں گی

مزید : عالمی منظر