مزید 14بڑے سکول دانش اتھارٹی کے حوالے کرنے کا فیصلہ

مزید 14بڑے سکول دانش اتھارٹی کے حوالے کرنے کا فیصلہ

  



 لاہور (لیاقت کھرل) لاہور کے 13 بڑے سکولوں کو دانش اتھارٹی کے حوالے کرنے کے بعد 14 مزید بڑے سکولوں کو دانش اتھارٹی کے حوالے کرنے کا حتمی فیصلہ کر لیا گیا ہے جس کے بعد دانش اتھارٹی کے حوالے کئے جانے والے سکولوں کی تعداد 27 ہو جائے گی۔ محکمہ سکولز ایجوکیشن کے ذرائع کا کہنا ہے کہ محکمہ سکولز ایجوکیشن اور دانش اتھارٹی کے مابین طے پا جانے والے معائدہ کے مطابق پیک اور انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری بورڈ کے کمزور رزلٹ کے حامل سکولوں کو دانش اتھارٹی کے حوالے کیا جائے گا تاکہ ان سکولوں میں کوالٹی آف ایجوکیشن کو بہتر بنایا جا سکے اور دیگر سکولوں سے بہتر یا کم سے کم ان سکولوں کے برابر تعلیمی معیار بنایا جا سکے۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ دانش اتھارٹی نے طے پائے جانے والے معائدے کی بجائے ایسے بڑے بڑے سکولوں کو اپنی تحویل میں لینا شروع کر دیا ہے جن سکولوں کی بڑی بڑی عالیشان اور خوبصورت عمارتیں اور اربوں روپے مالیت کی اراضی بتائی گئی ہے جبکہ ان سکولوں کے پیک اور تعلیمی بورڈ رزلٹ کمزور نہ ہیں۔بلکہ ان سکولوں کے رزلٹ 100 فیصد بہتر اور شاندار رزلٹ ہیں اور دانش اتھارٹی کی محض اربوں روپے کی جائیداد پر نظر بتائی گئی ہے ذرائع نے بتایا ہے کہ لاہور میں دانش سکولز اتھارٹی کے حوالے کئے جانے والے 13 سکولز کی اراضی اربوں روپے مالیت کی بتائی گئی ہے جبکہ جن14 مزید بڑے سکولوں کو دانش اتھارٹی کے حوالے کئے جانے کا حتمی فیصلہ کر لیا گیا ہے اس میں لاہور کے آٹھ بڑے سکولز بتائے گئے ہیں جبکہ شیخوپورہ، ننکانہ سمیت دیگر اضلاع سے بھی بڑے بڑے سکولوں کو دانش اتھارٹی کے حوالے کیا جا رہا ہے جس پر اساتذہ تنظیموں نے اس حکومتی اقدام کو مسترد کر دیا ہے اور عید الفطر کے بعد صوبائی سطح پر احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان کر دیا ہے اس حوالے سے ٹیچرز یونین کے مرکزی صدر اللہ بخش قیصر رؤف پیرزادہ اور پنجاب ٹیچرز یونین (کاظمی گروپ) کے جنرل سیکریٹری رانا لیاقت علی میاں ارشد علی اور دیگر نے کہا ہے کہ دانش اتھارٹی کو نوازنے کے لئے شاندار رزلٹ والے سکولوں کو حوالے کیا جا رہا ہے جو کہ اربوں روپے کی جائیداد پر نظر اور خورد برد کرنے کا ایک منصوبہ ہے۔ اس کے خلاف صوبائی سطح پر احتجاجی تحریک چلائی جائے گی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1