گھوٹکی،طالبات کے پرائمری سکول کو پولیس چوکی بنا دیا گیا

گھوٹکی،طالبات کے پرائمری سکول کو پولیس چوکی بنا دیا گیا

  



گھوٹکی(این این آئی)گھوٹکی میں طالبات کے پرائمری اسکول میں پولیس چوکی قائم کردی گئی۔تین سال سے اسکول کا عملہ گھر بیٹھے تنخواہیں لے رہا ہے ، کوئی پوچھنے والا ہی نہیں ہے ۔سندھ کے وزیرداخلہ نے نوٹس لیتے ہوئے فوری پولیس چوکی ختم کرنے کی ہدایت کردی۔تفصیلات کے مطابق گھوٹکی کے میں واقع حیات پتافی گرلز اسکول میں 40 سے زائد طالبات سے تعلیم کا حق چھین لیا گیاہے ۔تین سال پہلے یہاں علم کی شمع جلتی تھی لیکن قانون کے رکھوالوں نے بچیوں کو تعلیم سے محروم کردیا ،اسکول بند کردیاگیا اور پولیس چوکی قائم کردی گئی۔ پھر اسے جروار تھانے میں بدل دیا گیا ۔پولیس اہلکار کا کہنا ہے کیا کریں سرکار نے جب چوکی کے لیے جگہ نہیں دی تو اسکول کو ہی پولیس چوکی بنالیاگیا ۔ گرلز پرائمری سکول حیات پتافی کا عملہ گھر بیٹھے تنخواہیں وصول کر رہا ہے ، زیور تعلیم سے محروم معصوم بچیوں کا بس ایک سوال ہے سائیں سرکار ہم اسکول کب جائیں گی ۔دوسری جانب میڈیا میں خبرنشرہونے کے بعد سندھ کے وزیرداخلہ سہیل انور خان سیال گرلزاسکول میں چوکی قائم کرنے کانوٹس لیتے ہوئے ایس ایس پی گھوٹکی مسعودبنگش سے رپورٹ طلب کرلی ہے اور اسکول فوری طور پر ختم کرنے کی ہدایت کی ہے۔

مزید : صفحہ آخر